بانی ایم کیو ایم کیخلاف برطانوی قانونی فرم کی خدمات حاصل کر لی گئیں

بانی ایم کیو ایم کیخلاف برطانوی قانونی فرم کی خدمات حاصل کر لی گئیں

برطانوی قانونی فرم نے تحقیقات شروع کر دی ہیں اور شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں، تفتیشی افسر۔۔۔۔فائل فوٹو

کراچی: کراچی کی انسدادِ دہشت گردی کی عدالت میں بانی ایم کیو ایم کے خلاف مقدمے کی سماعت ہوئی۔ تفتیشی افسر نے مقدمے میں ہونے والی ایک اہم پیش رفت سے عدالت کو آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ منی لانڈرنگ کیس میں بانی ایم کیو ایم کے گرد گھیرا مزید تنگ کرتے ہوئے برطانوی قانونی فرم کی خدمات حاصل کر لی گئی ہیں۔ برطانوی قانونی فرم نے تحقیقات شروع کر دی ہیں اور شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں جبکہ اس سلسلے میں تفتیش کنندگان نے پاکستان کا دورہ بھی کیا ہے۔

 

تفتیشی افسر نے بتایا کہ ماضی میں برطانوی قانونی فرم کی خدمات نہ ہونے کے سبب ایم کیو ایم بانی بچ نکلتے رہے تاہم اب ملزم کے خلاف دیگر ممالک سے بھی شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں۔ اب تک 69 بنک اکاؤنٹس کی تفصیلات سامنے آ چکی ہیں جن کے ذریعے منی لانڈرنگ کی گئی۔

 

مزید پڑھیں: اپوزیشن جماعتوں نے کل پھر آل پارٹیز کانفرنس طلب کر لی


عدالت کو بتایا گیا کہ ایم کیو ایم کے ذیلی ادارے خدمتِ خلق فاؤنڈیشن کے فنڈز کا غلط استعمال کیا گیا۔ متحدہ کے ارکان قومی اسمبلی، سینیٹرز اور ڈپٹی میئر کے ذریعے رقم منتقل ہوتی رہی۔ منی لانڈرنگ کیس میں پیش رفت سے عدالت کو جلد آگاہ کر دیا جائے گا۔ ایم کیو ایم بانی ملک دشمن سرگرمیوں اور کراچی میں قتل و غارت میں بھی ملوث ہیں۔

 

ایف آئی اے حکام کے مطابق منی لانڈرنگ کیس میں نیب، رینجرز اور دیگر اداروں سے بھی معلومات طلب کی گئی ہیں۔ وزارتِ خارجہ کے ذریعے دوسرے ممالک سے معلومات منگوائی ہیں۔ برطانوی حکومت اور متحدہ عرب امارات کے حکام سے بھی بینک ٹرانزیکشن کا ریکارڈ مانگ لیا گیا ہے۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں