انتظامیہ نے پی آئی اے کو کروڑوں کا ٹیکہ لگا دیا

انتظامیہ نے پی آئی اے کو کروڑوں کا ٹیکہ لگا دیا

لاہور: پی آئی اے نے پرواز کے قابل کروڑوں مالیت کا طیارہ صرف ستاون لاکھ روپے میں بیچ دیا۔ جرمنی کو بیچے جانے والے طیارے کا ٹینڈر بارہ دسمبر کو کھلنا تھا۔


نجی ٹی وی کے مطابق انتظامیہ نے بولی لگنے سے پہلے ہی من پسند پارٹی کو دے دیا، طیارے کو ملک سے باہر لے جانے کی بھی الگ الگ کہانیاں سنائیں گئیں۔

پرواز کے قابل پی آئی اے کا ایربس طیارہ صرف 50 ہزار یورو یعنی 57 لاکھ روپے میں فروخت کرنے کا انکشاف ہوا ہے ۔ ایروردی ہونے کی بنا پر مارکیٹ میں اس طیارے کی قیمت کئی ملین ڈالر بتائی جاتی ہے ۔ واضح رہے کہ سیٹیں ، انجن اور کار آمد پرزے نکال کر ملک میں طیارے کا ڈھانچہ 60 سے 70 لاکھ روپے میں فروخت ہوتاہے۔

پی آئی اے نے اپنے چار ایربس اے 310 طیارے رواں ماہ 31 دسمبر تک گرائونڈ کرنے کا فیصلہ کیا اور ان کی فروخت کیلئے اشتہار دیا جس میں ٹینڈر کھلنے کی تاریخ 12 دسمبر ہے لیکن پی آئی اے انتظامیہ نے پیپرا قوانین کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے ٹینڈر کھلنے سے قبل ہی من پسند پارٹی کو طیارہ فروخت کردیا۔

طیارے کی فروخت کیلئے نہ تو پی آئی اے کے بورڈ آف ڈائریکٹرز سے منظوری لی گئی اور نہ ہی حکومت پاکستان سے اجازت۔ پی آئی اے کے قائم مقام جرمن سی ای او بریڈ ہلٹن نے اپنے ملک کے ایک عجائب گھر کو طیارہ فروخت کرنے کیلئے پاکستان کے قواعد وضوابط تک کا خیال نہیں کیا ۔