'پیپلز پارٹی کی باتیں دل جلانے والی تھیں، جواب لیاقت آباد میں دیں گے'

پیپلز پارٹی کے قیام کے بعد سے اس کا سیاسی نعرہ نفرت سے شروع ہوا، خالد مقبول صدیقی۔۔۔۔۔فائل فوٹو

کراچی: ایم کیو ایم (بہادر آباد) کے رہنما خالد مقبول صدیقی نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پیپلز پارٹی کے قیام کے بعد سے اس کا سیاسی نعرہ نفرت سے شروع ہوا جس نے پاکستان کو دو حصوں میں تقسیم کر دیا اور پاکستان اس سے آج تک باہر نہیں آیا۔

 

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے لیاقت آباد میں جلسے کا خیر مقدم کرتے ہیں اور سوچا تھا یہ لوگ مثبت سوچ لے کر آئیں گے لیکن پیپلز پارٹی کی باتیں دل جلانے والی تھیں جس کا جواب لیاقت آباد میں ہی دیا جائے گا۔

 

مزید پڑھیں: 'زرداری 'اینٹ سے اینٹ بجانے' کے بیان کے بعد معافی کی درخواست بھجواتے رہے'

خالد مقبول صدیقی نے 5 مئی کو لیاقت آباد کے ٹنکی گراؤنڈ میں جلسے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ راگ آپ نے چھیڑ دیا غزل بھی سننا پـڑے گی۔ لیاقت آباد آپ کو جواب دے گا، جلسہ گاہ اور اس کی دیواریں جواب دیں گے اور کوشش کی جا رہی ہے کہ ہمیں جلسے کی اجازت نہ دی لیکن ہم 85 فیصد مینڈیٹ رکھتے ہیں تو اجازت بھی رکھتے ہیں اور ہمیں کس سے اجازت لینی ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ آپ نے نفرتیں پھیلائیں اس کا جواب لیاقت آباد میں ہی دیا جائے گا۔ آپ ’ادھر ہم ادھر تم‘ کے نعرے سے باز نہیں آئے۔

 

خالد مقبول صدیقی کا کہنا تھا کہ آپ نے لوٹ ہوئی دولت سے سینیٹ میں ایم پیز کو خریدا، روٹی کپڑا مکان کا وعدہ کیا، گولی کفن اور قبرستان دیا، اب طاقت کے بل بوتے پر مینڈیٹ پر قبضہ کرنا چاہتے ہیں۔ پی پی کو کبھی شہری علاقوں سے کوئی مینڈیٹ ملا۔

 

ایم کیوایم رہنما نے کہا کہ جب یہ شہر قائداعظم کی بہن کے ساتھ کھڑا تھا تو پی پی کا لیڈر کس طرف کھڑا تھا۔ آپ لوگوں نے 40 سے 45 سال میں پاکستان کو کیا دیا جبکہ کراچی والوں کو یاد ہے آپ کی پہلی حکومت آنے سے پہلے یہ شہر واقعی روشنیوں کا شہر تھا۔ پی پی والوں نے اردو کے خلاف بل پیش کیا، وسائل اور طاقت کو مہاجروں کے خلاف استعمال کیا اور آپ اپنے جس دور کو سب سے سنہرا دور کہتے ہیں اس میں بھی آپ کو ایک سیٹ نہ ملی کیونکہ کراچی آپ کو پہنچاتا ہے۔

 

 

ان کا کہنا تھا کہ شاید ہم آپ کے علاقوں میں ایسے جلسے نہ کر پائیں کیونکہ ہمیں پتا ہے نفرت آپ کی پالیسی ہے لیکن آپ کو پتا ہے اردو بولنے والے محبت کرنے والے لوگ ہیں اس لیے آپ یہاں تک آ گئے۔ بلاول لیاری میں جلسہ کیوں نہیں کرتے وہ جائیں اور لیاری میں جلسہ کر کے دکھائیں۔

 

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم نے نیو اسلام آباد انٹرنیشنل ایئر پورٹ کا افتتاح کر دیا

خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ آپ کس حیثیت سے پی پی کے چیئرمین بنے ہوئے ہو۔ بھٹو فیملی کی جماعت پر قبضہ ہو گیا۔ تم نے کراچی کی مانگ خون سے بھری اور جو کچھ پکا قلعہ حیدر آباد میں کیا وہ نفرت کی بہت بڑی داستان ہے۔ آپ کی بدمعاشیوں پر اب نظر رکھنے کا وقت آ گیا اور لوٹ مار کا حساب لینے کا وقت آ گیا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ کراچی میں جو بھی ہوا، جتنا ہوا اسی ادوار میں ہوا جب مہاجروں کے پاس اختیار رہا، ایم کیوایم کے ادوار میں کام ہوا اور پیپلزپارٹی نے آ کر اسے اجاڑا۔ آپ کی حکومت تو کرپشن کی وجہ سے برطرف ہوئی۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں