کشمیر کو حق خود ارادیت دیئے بغیر بھارت کیساتھ تعلقات نارمل نہیں ہو سکتے، وزیراعظم

کشمیر کو حق خود ارادیت دیئے بغیر بھارت کیساتھ تعلقات نارمل نہیں ہو سکتے، وزیراعظم
کیپشن:   کشمیر کو حق خود ارادیت دیئے بغیر بھارت کیساتھ تعلقات نارمل نہیں ہو سکتے، وزیراعظم سورس:   فائل فوٹو

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے مودی سرکار پر واضح کر دیا کہ کشمیر کو حق خود ارادیت دیئے بغیر بھارت کے ساتھ تعلقات نارمل نہیں ہو سکتے۔ 

وزیراعظم عمران خان کے زیر صدرات اہم اجلاس ہوا جس میں بھارت کے ساتھ کسی قسم کی تجارت بحال نہ کرنے کے فیصلے پر اتفاق کر لیا گیا ہے۔ اجلاس میں بھارت کے ساتھ تجارت بحال نہ کرنے کے فیصلے پر اتفاق کرتے ہوئے کہا گیا کہ مقبوضہ کشمیر کی آئینی صورتحال بحال ہونے تک کسی قسم کی تجارت نہیں ہو سکتی۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ہمارا اصولی موقف ہے کہ کشمیر کا مسئلہ حل کئے بغیر بھارت کے ساتھ تجارت نہیں ہو گی اور اس سے غلط تاثر جائے گا کہ ہم کشمیر کو نظر انداز کرکے بھارت سے تجارت شروع کریں۔ کشمیر کو حق خود ارادیت دئیے بغیر بھارت کے ساتھ تعلقات نارمل نہیں ہو سکتے۔

اس اہم اجلاس میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور وزارت خارجہ کے اعلیٰ حکام شریک ہوئے۔ وزارت خارجہ نے بھارت کے ساتھ تجارت کے حوالے سے تجاویز پر بریفنگ دی۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز وفاقی کابینہ نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد کردی تھی۔ ای سی سی نے بھارت سے چینی اور کپاس منگوانے کی تجویز پیش کی تھی۔

کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے 19 ماہ کی بندش کے بعد پاک بھارت تجارت دوبارہ شروع کرنے کا اعلان کرتے ہوئے سے چینی، کپاس اور دھاگا درآمد کرنے کی منظوری دی تھی۔

وزیر خزانہ حماد اظہر کا کہنا تھا کہ چینی کی قیمتوں میں اضافے کے تناظر میں بھارت سے چینی کی تجارت کھولنے کا فیصلہ کیا، چینی کی فراہمی کی صورت حال کو بہتر کرنے کیلئے بھارت سے 5 لاکھ ٹن چینی درآمد کرنے کا فیصلہ کیا، اس کا براہ راست فائدہ عوام کو پہنچے گا۔ انہوں نے کہا اس سال بھارت اور پاکستان میں چینی کی قیمتوں میں 15 سے لے کر 20 فیصد تک فرق ہے، اس لئے بھارت سے چینی درآمد کرنے کا فیصلہ کیا۔