نریندرا مودی نے ناکامی اور ملکی نقصان کا اعتراف کر لیا

 نریندرا مودی نے ناکامی اور ملکی نقصان کا اعتراف کر لیا
فوٹو بشکریہ:ٹوئیٹر

نئی دہلی:بھارتی وزیر اعظم  نریندرا مودی کا اپنی فضائیہ کی کمزوری اور ملکی نقصان کا اعتراف۔


 

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ، بھارتی وزیر اعظم نے بھارتی  فضائیہ کی کمزوری اور ملکی نقصان کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ بھارت نے  رافیل طیاروں کی کمی محسوس کی  ہے اگر بھارت کے پاس رافیل طیارے ہوتے تو نتائج مختلف  ہوتے لیکن سیاست کی وجہ سے بھارت کا بڑا نقصان ہوا ہے۔

 

 2016 میں 9.4 ارب ڈالر کے 36 رافیل جنگی طیاروں کی خریداری کے معاہدے پر مودی سرکار نے فرانسیسی کمپنی  ڈاسولٹ  کو بھارتی پارٹنر کے انتخاب کے لیے آپشن دینے سے انکار کیا تھا جس پر ہر طرف مودی سرکار کی لعن طعن ہوئی۔بھارتی عوام اور سیاست دانوں نے رافیل طیاروں کے معاہدے میں غبن، خردبرد اور کک بیکس لینے پر مودی سرکار پر کڑی تنقید کی جس کےبعد مودی سرکار کی نیند حرام ہو گئی۔

 

اس سے قبل 31 جنوری 2012 کو ہندوستانی وزارتِ دفاع نے اعلان کیا تھا کہ بھارت، فرانس سے 126 رافیل لڑاکا طیارے خریدے گا۔ معاہدے کے تحت فرانسیسی کمپنی ڈاسالٹ ایوی ایشن نے 18 لڑاکا طیارے مکمل تیار کرکے بھارت کو دینے تھے اور باقی 108 طیارے بھارت کی سرکاری کمپنی  ہندوستان ایروناٹکس لمیٹڈ  اور ڈاسالٹ ایوی ایشن کے اشتراک سے ہندوستان میں تیار ہونے تھے۔

بعد ازاں  126 طیاروں کے بجائے مکمل تیار شدہ صرف 36 طیارے خریدے گی اور ہندوستانی سرکاری کمپنی کے ذریعے طیارے بنانے کا منصوبہ  ختم کردیا گیا کہ دفاعی ساز و سامان تیار کرنے والی سرکاری کمپنی ہندوستان ایروناٹکس جنگی طیارے بنانے کی صلاحیت نہیں رکھتی۔

وزیرِاعظم نریندر مودی نے 36 طیاروں کی خریداری کے لیے 10 اپریل 2015 کو فرانس کا دورہ کیا۔ اس دورے میں انیل امبانی ان کے ساتھ تھے۔اپوزیشن نے الزام لگایا کہ انیل امبانی نے نریندر مودی کے فرانس جانے سے 13 دن پہلے  ریلائنس ڈیفنس  کے نام سے نئی کمپنی بنائی لیکن انیل امبانی اور ان کی کمپنی نے ان الزامات کو جھوٹا قرار دیا۔