سپریم کورٹ کا بڑا فیصلہ، وکلا کے تمام غیرقانونی چیمبرز گرانے کا حکم

سپریم کورٹ کا بڑا فیصلہ، وکلا کے تمام غیرقانونی چیمبرز گرانے کا حکم
کیپشن:   سپریم کورٹ کا بڑا فیصلہ، وکلا کے تمام غیرقانونی چیمبرز گرانے کا حکم سورس:   File Photo

اسلام آباد: سپریم کورٹ آف پاکستان نے وکلا چیمبر گرانے سے روکنے کے لیے اسلام آباد بار کی درخواست خارج کر دی ہے۔ عدالت نے وکلا سے فٹبال گراؤنڈ فوری خالی کرانے کا حکم دیتے ہوئے تمام غیر قانونی چیمبرز گرانے کا حکم دے دیا۔

سماعت کے دوران  چیف جسٹس گلزار احمد نے استفسار کیا کہ کس بنیاد پر غیر قانونی چیمبرز کو برقرار رہنے دیں ؟ وکلاء کا فٹبال گراؤنڈ پر کوئی حق دعوی نہیں، جس نے پریکٹس کرنی ہے اپنا دفتر کہیں اور بنا لے۔ وکیل شعیب شاہین نے عدالت کو بتایا کہ فٹبال گراؤنڈ پر کئی عدالتیں بھی بنی ہوئی ہیں۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ جو عدالتیں گراؤنڈ کی زمین پر بنی ہوئی ہیں وہ بھی مسمار کر دیں۔

 چیف جسٹس نے کہا کسی غیر قانونی کام کو جواز کیسے فراہم کر دیں ؟ حامد خان صاحب دو ماہ میں گراؤنڈ خالی کریں ۔وکیل حامد خان نے کہا کہ ہائیکورٹ کی نئی بلڈنگ میں منتقل ہونے تک کا وقت دیں۔ جس پر چیف جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ اتنا لمبا وقت نہیں دے سکتے۔سپریم کورٹ نے غیر قانونی چیمبرز مسمار کرنے کا اسلام آباد ہائی کورٹ کا حکم برقرار رکھا ہے۔ عدالت نے وکلاء کی متبادل جگہ ملنے تک وقت دینے کی استدعا بھی مسترد کر دی۔