بھارتی فوج کی ریاستی دہشت گردی میں مزید 2 کشمیری نوجوان شہید

بھارتی فوج کی ریاستی دہشت گردی میں مزید 2 کشمیری نوجوان شہید
کیپشن:    بھارتی فوج نے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی کرتے ہوئے لاشوں کو اہل خانہ کے حوالے نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

سری نگر: مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران بھارتی فوج کی جارحیت میں مزید 2 کشمیری نوجوان شہید ہو گئے۔عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق جنت نظیر وادی کے ضلع پلوامہ میں بھارتی فوج نے داخلی اور خارجی راستوں کو بند کر کے گھر گھر تلاشی لی جس کے دوران خواتین کیساتھ بدتمیزی کی گئی، بزرگوں اور بچوں کو ہراساں کیا گیا اور نوجوانوں کو غیر قانونی طور پر گرفتار کرلیا گیا۔

سرچ آپریشن کے دوران قابض بھارتی فوج کی فائرنگ سے 2 نہتے کشمیری نوجوان شہید ہوگئے جب کہ ایک گھر کو بھی مکمل طور پر تباہ کر دیا گیا۔ قابض بھارتی فوج نے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی کرتے ہوئے لاشوں کو اہل خانہ کے حوالے نہیں کیا۔

بھارت نواز کٹھ پتلی انتظامیہ نے روایتی ہٹ دھرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے شہید ہونے والے نوجوانوں کو دہشت گرد ثابت کرنے اور مقابلے میں مارے جانے کا دعویٰ کیا تاہم اہل خانہ اور علاقہ مکینوں نے بھانڈہ پھوڑ دیا۔ انسانی حقوق کی تنظیموں اور حریت رہنماؤں نے نوجوانوں کی ماورائے عدالت قتل کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ 15 روز کے درمیان بھارتی فوج کی فائرنگ سے شہید ہونے والے نوجوانوں کی تعداد 10 ہوگئی ہے.سرچ آپریشن کے نام پر چادر وچار دیواری کے تقدس کو پامال کرنا معمول بنتا جا رہا ہے۔