مولانا سمیع الحق کو افغان حکومت سے خطرہ تھا :حامد الحق

مولانا سمیع الحق کو افغان حکومت سے خطرہ تھا :حامد الحق

نوشہرہ : مولانا سمیع الحق کے بیٹے نے انکشاف کر تے ہوئے کہا کہ ان کے والد کو افغان حکومت اور مختلف طاقتوں کی جانب سے خطرہ تھا ،ان کے بیٹے کا کہنا تھا کہ والد افغانستان کو امریکہ کے تسلط سے آزاد کرانا چاہتے تھے۔


مولانا حامد الحق کا کہنا تھا کہ والد صاحب کو افغان حکومت اور مختلف طاقتوں کی جانب سے خطرہ تھا، کیوں کہ وہ افغانستان کو امریکا کے تسلط سے آزاد کرانا چاہتے تھے، جب کہ ہمیں ملکی خفیہ اداروں نے بھی کئی بار بتایا تھا کہ مولانا سمیع الحق بین الاقوامی خفیہ اداروں کے ہدف پر ہیں۔

  مولانا حامد الحق کا کہنا تھا کہ ہم نے پولیس اور سیکیورٹی اداروں کو دھمکیوں کے حوالے سے آگاہ کردیا تھا، جب کہ دارالعلوم اکوڑہ خٹک میں بھی سیکیورٹی سخت کردی گئی تھی تاہم مولانا صاحب سیکیورٹی کو پسند نہیں کرتے تھے اس لیے سفر میں ان کے ساتھ دوستوں کے علاوہ کوئی سیکیورٹی اہلکار نہیں ہوتا تھا۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق  قاتل گھر کے دروازے سے نہیں بلکہ دیوار پھلانگ کر اندر داخل ہو ا تھا اور چاقو کے وار سے مولانا سمیع الحق کو شہید کیا ۔

مولانا حامد الحق نے مزید کہا کہ ایسی قوتیں جو ملک میں اسلام کا غلبہ نہیں چاہتیں، جو جہاد مخالف ہیں، جو مدرسوں اور خانقاہوں کی مخالفت کرتے ہیں وہی طاقتیں اس قتل میں ملوث ہیں۔ میں اس موقع پر مولانا سمیع الحق کے چاہنے والے کارکنان اور عوام سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں اور دشمن قوتوں کو تنقید کا موقع نہ دیں۔