طب کے شعبے میں 3سائنسدانوں نے نوبیل انعام جیت لیا

طب کے شعبے میں 3سائنسدانوں نے نوبیل انعام جیت لیا

واشنگٹن :رواں سال طب کے شعبے میں نوبیل انعام ان تین سائنسدانوں کے نام رہا جنھوں نے انسانی زندگی کے ایک بڑے معمے کو حل کیا۔


اطلاعات کے مطابق امریکا سے تعلق رکھنے والے جیفری سی ہال، مائیکل روش بیش اور مائیکل ڈبلیو ینگ کو حیاتیاتی گھڑی کو کنٹرول کرنے والے مالیکیولر میکنزمز کی دریافت پر دنیا کے اس سب سے بڑے اعزاز سے نوازا گیا۔ان تینوں ماہرین طب نے انسانی زندگی کے ان اسرار پر روشنی ڈالی کہ کس طرح زندگی وقت کو ٹریک کرتی ہے اور خود کو سورج کی حرکت کے مطابق تبدیل کرتی ہے۔

انسانی حیاتیاتی گھڑی یا سرکیڈین ردہم وہ چیز ہے جس کے ذریعے جسم ہر گزرتے دن کے ساتھ خود کو ریگولیٹ کرتا ہے اور یہ عمل نیند، انسانی رویوں، ہارمونز کی سطح، جسمانی درجہ حرارت اور میٹابولزم پر اثرانداز ہوتا ہے۔یہی وجہ ہے کہ نیند متاثر ہونا کے تباہ کن نتائج مرتب ہوتے ہیں اور متعدد جان لیوا امراض کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

ان تینوں محققین نے دریافت کیا کہ زمین پر موجود ہر قسم کی زندگی یعنی نباتات سے لے کر انسانوں تک، کی حیاتیاتی گھڑی خود کو ریگولیٹ کرنے کے لیے سورج کا استعمال کرتی ہے۔انہوں نے ثابت کیا کہ یہ گھڑی جسمانی افعال کو متاثر کرسکتی ہے اور لوگوں اور زندگی کے دیگر شعبوں کے لیے بڑے مسائل کا باعث بن سکتی ہے۔