انگلینڈ کا اپنے کھلاڑیوں کو کشمیر پریمیر لیگ سے روکنے کا فیصلہ

انگلینڈ کا اپنے کھلاڑیوں کو کشمیر پریمیر لیگ سے روکنے کا فیصلہ
سورس: فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر

لاہور: انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ (ای سی بی) نے پاکستان کے سارے احسان بھلاتے ہوئے بھارتی ایماءپر اپنے کھلاڑیوں کو کشمیر پریمیر لیگ (کے پی ایل) سے روکنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق بھارتی کرکٹ بورڈ کے ایک آفیشل نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ بات درست ہے کہ ای سی بی اپنے کھلاڑیوں کو کشمیر لیگ کیلئے ریلیز نہیں کر رہا،ہمیں پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) سے کوئی مسئلہ نہیں مگر کشمیر میں ایونٹ نہیں ہونے دیں گے، ہم اپنی حکومت کے موقف پر قائم ہیں۔

واضح رہے کہ گزشتہ برس کورونا وباءعروج پر ہونے کے باوجود پاکستان نے اپنی کرکٹ ٹیم انگلینڈ بھیجی تھی اور مشکل وقت میں کرکٹ بحالی میں اہم کردار ادا کیا تھا مگر ای سی بی نے پاکستان کا یہ احسان بھی بھلا دیا جس کی بنیادی وجہ بھارتی خوشنودی ہے جس نے اپنی خواتین کرکٹرز کو دی ہنڈرڈ ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کی اجازت دی،مینز ایونٹ میں بھی چند بھارتیوں کی شرکت پر بات چیت جاری ہے۔

دوسری جانب انگلینڈ کرکٹ ٹیم کے سابق سپنر مونٹی پنیسر نے کشمیر لیگ سے دستبردار ہونے کا اعلان بھی کر دیا ہے جن کا کہنا ہے کہ میں کسی تنازعہ کا حصہ نہیں بننا چاہتا اور انگلش کرکٹ بورڈ بورڈ اور پلیئرز ایسوسی ایشن کے مشورے پر عمل کرتے ہوئے کشمیر لیگ میں نہیں جاؤں گا۔ 

یاد رہے کہ بھارتی کرکٹ بورڈ کے ایک آفیشل نے تصدیق کی ہے کہ بی سی سی آئی نے تمام ممالک سے رابطہ کرکے انہیں اپنے کھلاڑی کو کے پی ایل کیلئے ریلیز نہ کرنے کی ہدایت دی ہے۔ 6اگست کو شروع ہونے والے ایونٹ میں 6 ٹیمیں مقابل ہوں گی،ان میں سے ایک ٹیم کو اوورسیزواریئرز کا نام دیا گیا ہے اور مونٹی پنیسر نے اسی ٹیم کی نمائندگی کرنا تھی۔