رنگون میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہرے ، پولیس کی فائرنگ 6 افراد ہلاک

رنگون میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہرے ، پولیس کی فائرنگ 6 افراد ہلاک
سورس:   File photo

رنگون،میانمار کے دو شہروں میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہروں پر پولیس کی فائرنگ سے مزید 6 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق میانمار میں فوجی بغاوت کے خلاف ملک گیر مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے، ملک کے دوسرے بڑے شہر ماندالے میں مشتعل مظاہرین پر پولیس نے فائرنگ کردی جس سے  2 افراد ہلاک ہوگئے۔

  میانمار کے دوسرے شہر مونیوا میں پولیس نے مظاہرین پر طاقت کا استعمال کیا گیا اور آنسو گیس شیلنگ کے بعد مظاہرین پر براہ راست فائرنگ کردی۔ فائرنگ سے 4 افراد ہلاک ہوگئے۔

 ذرائع کے مطابق ہلاک ہونے والوں کو اسپتال منتقل کردیا گیا جہاں پوسٹ مارٹم میں تصدیق ہوئی کہ مظاہرین کے سینے اور سروں پر گولیاں ماری گئیں۔ ہلاک ہونے والوں میں 19 سالہ لڑکی بھی شامل ہے۔

 میانمار میں یکم فروری کو فوج نے اقتدار پر قبضہ کرکے ملک میں ایک سال کے لیے ایمرجنسی نافذ کردی تھی اور حکمراں آن سانگ سوچی کو حراست میں لے لیا گیا تھا جس کے بعد سے ملک گیر پُرتشدد مظاہرے شروع ہوگئے ہیں۔

 فوجی قیادت کی جانب سے مظاہرین کو طاقت سے کچلنے کی دھمکی کے بعد یکم مارچ کو میانمار کی پولیس نے مظاہرین پر براہ راست فائرنگ کی جس سے  18 افراد ہلاک ہوگئے تھے جب کہ گزشتہ ایک ہفتے کے دوران مجموعی طور پر 27 ہلاکتیں ہوئیں۔