حسن علی کو آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کیخلاف ٹیسٹ سیریز میں آرام دینے کا فیصلہ

حسن علی کو آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کیخلاف ٹیسٹ سیریز میں آرام دینے کا فیصلہ

فوٹو: فائل

لاہور : پاکستانی کرکٹ ٹیم انتظامیہ اور قومی سلیکشن کمیٹی فاسٹ باولر محمد عامر کے بعد حسن علی کے کندھوں سے بھی بوجھ کم کرنا چاہتی ہے۔ تجویز سامنے آرہی ہے کہ حسن علی کو ایک فارمیٹ میں پاکستان ٹیم میں شامل نہ کیا جائے۔ امکان ہے کہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز میں حسن علی ٹیسٹ میچوں میں حصہ نہیں لیں گے انہیں مستقبل میں صرف ون ڈے اور ٹی ٹونٹی انٹرنیشنل میچ کھلانے کی تجویز ہے۔

پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان 2 ٹیسٹ اور 3 ٹی ٹونٹی میچز کی سیریز ہوگی جبکہ نیوزی لینڈ اور پاکستان کی ٹیموں کے مابین 3 ٹیسٹ، 3 ون ڈے اور 3 ٹی ٹونٹی میچز پر مشتمل سیریز ہوگی۔ محمد عامر کی خراب فارم کے باعث انہیں روٹیشن کی پالیسی کے تحت کھلایا جاتا ہے جبکہ حسن علی کے بارے میں یہ رپورٹ دی گئی ہے کہ تینوں فارمیٹ کھیلنے سے حسن علی کی کارکردگی متاثر ہورہی ہے۔

وہ ٹیسٹ میچوں کے مقابلے میں ون ڈے اور ٹی ٹونٹی فارمیٹ میں موثر ثابت ہو سکتے ہیں۔ حسن علی سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ محدود اوورز کے فارمیٹ پر توجہ دیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کی سیریز میں پاکستانی با?لنگ کا زیادہ تر انحصار لیگ سپنر یاسر شاہ پر ہوگا جبکہ فاسٹ بولنگ میں محمد عامر، راحت علی، فہیم اشرف اور میر حمز ہ کو ٹیم میں شامل کیا جاسکتا ہے۔

24سالہ حسن علی دو سال پہلے پاکستان ٹیم میں آئے تھے انہوں نے پاکستان کی جانب سے چار ٹیسٹ33 ون ڈے انٹر نیشنل اور22ٹی ٹونٹی انٹر نیشنل میچ کھیلے ہیں۔ چار ٹیسٹ میچوں میں 29.58کی اوسط سے12 وکٹیں لینے والے حسن علی پر بوجھ کم کرکے انہیں محدود اوورز کی ٹیموں میں شامل کیا جائے گا۔ انگلینڈ کے خلاف لیڈز ٹیسٹ میں حسن علی نے82رنز دے کر دو وکٹ حاصل کئے تھے اسی ٹیسٹ میں یہ بات نوٹ کی گئی تھی کہ لمبا اسپیل کراتے ہوئے حسن علی تھک جاتے ہیں جس سے ان کی بولنگ پر اثر پڑتا ہے۔