'وفاقی حکومت کی خواہش ہے لوگ کورونا سے لاکھوں کی تعداد میں مریں'

'وفاقی حکومت کی خواہش ہے لوگ کورونا سے لاکھوں کی تعداد میں مریں'
لوگ مکھیوں کی طرح مر جائیں گے تو کیا کریں گے ہم ایسی معیشت کا، عذرا پیچوہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

کراچی: وزیر صحت سندھ ڈاکٹر عذرا پیچوہو کا کہنا ہے کہ وفاق چاہتا ہے لوگ کورونا سے لاکھوں کی تعداد میں مریں۔ سندھ اسمبلی کے اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے عذرا پیچوہو نے کہا کہ وزیراعظم کہتے ہیں کورونا سے ڈرنا نہیں لڑنا ہے یہ ایسے لڑیں گے کورونا سے .


انہوں نے کہا کہ 13مئی کے بعد جس طرح لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی کی گئی اب اس کا نتیجہ بہت ہی بُرا آ رہا ہے، اب صورتحال ہمارے ہاتھ سے نکل رہی ہے، حقیقت یہ ہے کہ ہر گھر سے مریض نکل رہا ہے اور ہمارے پاس اسپتالوں میں بستر کم پڑ رہے ہیں۔

وزیر صحت سندھ نے کہا کہ کوئی چاہتا ہے کہ لاکھوں افراد کورونا سے مر جائیں، وزیر اعظم 50 لوگوں کے ساتھ مل کر اجلاس کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ کورونا ایک قسم کا زکام ہے، لوگ مکھیوں کی طرح مر جائیں گے تو کیا کریں گے ہم ایسی معیشت کا۔

عذرا پیچوہو نے کہا کہ وفاقی حکومت نے ہمیں حفاظتی سامان تک نہیں دیا اور وفاقی حکومت نے کورونا کو مذاق سمجھا ہے، ہم بحران کی طرف جا رہے ہیں اور وقت ہاتھ سے نکل چکا ہے، مریض اسپتالوں میں ڈھونڈتے پھریں گے بیڈ نہیں ملے گا اور یہ یہی چاہتے ہیں کہ لوگ لاکھوں کی تعداد میں مریں، سندھ حکومت کہتی رہی سخت لاک ڈاؤن کیا جائے مگر نہیں کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ سندھ میں 19 لیبارٹریز کورونا کا ٹیسٹ کر رہی ہیں اور کورونا مریضوں کے علاج کیلئے نجی اسپتالوں سے معاہدے کیے ہیں، ٹیلی ہیلتھ کا نظام قائم کیا ہے، ایمبولینس سروسز اور اسپتالوں کے درمیان رابطے کا کام بھی کر رہے ہیں، کراچی ائیر پورٹ پر محکمہ صحت کا عملہ تعینات کیا گیا ہے جبکہ مسافروں کا ٹیسٹ کیا جا رہا ہے بلکہ ان پر نظر بھی رکھی جا رہی ہے۔عذرا پیچوہو نے کہا کہ گھر پر موجود مریضوں کو ٹیلی فون پر مشورے دیے جا رہے ہیں۔