سعودی افواج کا آپریشن، قطیف میدان جنگ بن گیا

جدہ:سعودی عرب کے مشرقی قصبے قطیف میں سکیورٹی فورسز کا آپریشن جاری ہے ۔سعودی فورسز نے علاقے میں کارروائی کرتے ہوئے ایک شخص کو گولی مار کر ہلاک کر دیا جو لوگوں کو محفوظ مقام تک منتقل کر رہا تھا۔


بین الااقوامی خبر رساں ایجنسی کے مطابق قطیف کے علاقے عوامیہ میں جمعرات کو سکیورٹی فورسز نے ایک ایسے شخص کو گولی مار کر ہلاک کر دیا جو عوامیہ میں مسلح افراد اور سکیورٹی فورسز کے درمیان جھڑپوں میں مقامی رہائشیوں کو بس محفوظ مقام پر منتقل کر رہا تھا۔

اطلاعات کے مطابق حکام مئی سے عوامیہ کے پرانے حصے کو منہدم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کیونکہ ان کے مطابق شیعہ شدت پسند اس علاقے کی تنگ گلیوں کو چھپنے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔عوامیہ کی کل آبادی 30 ہزار ہے جن میں سے ایک اندازے کے مطابق ہزاروں افراد جھڑپوں کے باعث نقل مکانی کر گئے ہیں۔

انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والوں نے سکیورٹی فورسز پر علاقے کے رہائشیوں کو زبردستی نکالنے کا الزام لگایا ہے۔لڑائی اور سکیورٹی فورسز کے آپریشن میں شدت پچھلے ہفتے آئی جب سکیورٹی فورسز عوامیہ کے چھوٹے قصبے المصورہ میں داخل ہوئی۔ یہ قصبہ دو سو سال پرانا ہے۔

سرکاری میڈیا اور مقامی افراد نے جمعرات کے واقعے کو مختلف طور پر پیش کیا۔انکے مطابق اس شخص کی موت اس وقت ہوئی جب شدت پسندوں نے امدادی تنظیم کے تحت چلنے والی بس سروس پر فائرنگ کی۔ یہ بس سروس لوگوں کو محفوظ مقام پر منتقل کر رہی تھی۔

تاہم مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ جس شخص کی موت ہوئی اس کا نام محمد الروحیمانی تھا اور وہ مقامی آبادی کو لڑائی کے علاقے سے ممحفوظ مقام پر منتقل کر رہا تھا جب سکیورٹی فورسز نے اس پر فائر کیا۔