وزیراعظم  کے خلاف ہتک عزت کے مقدمے میں 10 جون کے لئے پیروی کا نوٹس جاری

وزیراعظم  کے خلاف ہتک عزت کے مقدمے میں 10 جون کے لئے پیروی کا نوٹس جاری

لاہور :وزیراعظم عمران خان کے خلاف ہتک عزت کے مقدمے میں 10 جون کے لئے پیروی کا نوٹس جاری کر دیا گیا ،عمران خان کے خلاف ہتک عزت اور ہرجانے کے مقدمے کی سماعت پہلے 22 جون کو مقرر کی گئی تھی۔


ایڈیشنل ڈسٹرکٹ جج لاہور محمد سہیل انجم نے شہبازشریف کی درخواست پر نوٹس جاری کیا ۔یاد رہے کہ شہبازشریف نے 10ارب کا الزام عائد کرنے پر عمران خان کے خلاف ہرجانے کے مقدمے کی جلد سماعت کی درخواست دائر کی تھی ۔

در خواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ ڈاکٹر بابر اعوان مشیر بننے کے بعد مقدمے میں پیروی نہیں کرسکتے، عمران خان کوذاتی حیثیت میں پیروی کا نوٹس  جاری کیاجائے،3 سال سے مقدمہ کی سماعت جاری ہے لیکن عمران خان نے تحریری جواب تک جمع نہیں کرایا۔60 سماعتوں میں 33 مرتبہ عمران خان نے التوائکی درخواستیں دائر کیں۔

عدالتی آرڈر شیٹ عمران خان کے غیرسنجیدگی اور لاپرواہ رویہ کا منہ بولتاثبوت ہے۔درخواست میں مزید کہا گیا کہ 4 جون کو پھر التوا کی درخواست کی گئی کہ عمران خان کے وکیل بابر اعوان کورونا کی وجہ سے اسلام آباد سے لاہور نہیں آسکتے۔عمران خان کے وکیل کی طرف سے عدالت کے سامنے یہ بیان دروغ گوئی اور جھوٹی گواہی کے مصداق ہے۔ڈاکٹر بابر اعوان کو 8 اپریل کو عمران خان کا مشیر اور وزیر پارلیمانی امور مقرر کیاگیا ہے۔

لیگل پریکٹیشنرز اینڈ بار کونسلز رولز 1976ئکے تحت کسی اور شعبہ یا نوکری اختیار کرنے پر وکالت کا سرٹیفکیٹ معطل ہوجاتا ہے جبکہ تقرری کے ایک ماہ تک پیشہ کی تبدیلی سے آگاہ نہ کرنے والا وکیل مس کنڈکٹ کا مرتکب ٹھہرتا ہے اور پروفیشنل مس کنڈکٹ کے مرتکب وکیل کا نام وکلا کی فہرست سے ہٹادیاجاتا ہے۔درخواست میں استدعا کی گئی کہ عمران خان کے نائب وکیل کو عدالت میں جھوٹی گواہی پر جرمانہ کیاجائے.