میانمار میں مسلمان اقلیت کی نسل کی بنیاد پر صفائی نہیں ہو رہی،آنگ سانگ سوچی

میانمار میں مسلمان اقلیت کی نسل کی بنیاد پر صفائی نہیں ہو رہی،آنگ سانگ سوچی

میانمار: میانمار کی فوج نے گذشتہ سال سرحدی محافظوں پر ہونے والے حملوں کے بعد فوجی آپریشن کا آغاز کیا۔ اس آپریشن کے دوران فوج پر روہنگیا کے مسلمانوں کے قتل، تشدد اورزیادتی کے الزامات عائد کیے گئے یہاں تک کہ 70,000 افراد کو اپنا گھر بار چھوڑ کر بنگلہ دیش بھاگنا پڑا۔

اب میانمر نوبل انعام یافتہ آنگ سانگ سوچی نےبرطانوی جریدے کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے تسلیم کیا کہ میانمار کی شمالی ریاست رخائین میں مشکلات ہیں جہاں روہنگیا کے مسلمان آباد ہیں۔ان کا یہ کہنا تھا کہ نسلی صفائی جیسی اصطلاح کا استعمال 'بہت سخت' ہے،،ملک میں مسلمان اقلیت کی نسل کی بنیاد پر صفائی نہیں ہو رہی۔میانمار کی ڈی فیکٹو رہنما کے مطابق ملک میں واپس آنے والے روہنگیا مسلمانوں کا کھلے دل سے خیر مقدم کیا جائے گا۔

انھوں نے کہا 'مجھے لگتا ہے وہاں بہت دشمنی ہے۔ وہاں مسلمان مسلمان کو مار رہے ہیں اگر انھیں لگتا ہے کہ وہ حکام سے تعاون کر رہے ہیں۔'

’یہ صرف کسی ایک کمیونٹی کو ختم کرنے کی بات نہیں ہے جیسا کہ آپ کہہ رہے ہیں۔ لوگ تقسیم ہوئے ہیں اور ہم اس تقسیم کو ختم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘

آنگ سانگ سوچی کو اس وقت بین الاقوامی تنقید کا سامنا کرنا پڑا جب میانمار کی حکومت نے شمالی ریاست رخائین میں فوجی آپریشن کا آغاز کیا۔آنگ سانگ سوچی کا کہنا تھا کہ وہ نہ تو مارگریٹ تھیچر ہیں اور نہ ہی مدد ٹریسا لیکن ایک ساستدان ہیں۔