الیکشن ایکٹ میں ترمیم، سپریم کورٹ کا یکطرفہ کارروائی کا فیصلہ

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں الیکشن ایکٹ 2017 میں ترمیم کے خلاف 6 درخواستوں پر سماعت کے دوران سابق وزیراعظم نواز شریف کی طرف سے کوئی پیش نہ ہوا جس پر عدالت عظمیٰ نے یکطرفہ کارروائی کرنے کا فیصلہ سنا دیا۔ چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا تین رکنی بنچ مذکورہ کیس کی سماعت کر رہا ہے۔ سماعت کے دوران مسلم لیگ (ن) کے رہنما راجہ ظفرالحق پیش ہوئے اور عدالت عظمیٰ کو آگاہ کیا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف نے اس کیس میں فریق بننے سے انکار کر دیا ہے۔

نواز شریف کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ یہ بل پارلیمنٹ نے پاس کیا اور انہیں ان کی پارٹی نے بطور پارٹی صدر منتخب کیا۔ انہوں نے کوئی درخواست نہیں دی تھی لہذا وہ اس کیس میں فریق نہیں بننا چاہتے جس پر جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ اگر نواز شریف حصہ نہیں بننا چاہتے تو یکطرفہ کارروائی جاری رکھیں گے۔ چیف جسٹس نے مزید کہا کہ پبلک نوٹس جاری کر دیا تھا جو انہوں نے وصول بھی کر لیا اگر وہ کارروائی کا حصہ نہیں بننا چاہتے تو ان کی اپنی مرضی۔

اس موقع پر چیف جسٹس نے لیگی رہنما راجہ ظفر الحق سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ وعدہ ہی کیا جو وفا ہو۔ راجہ ظفرالحق نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ مسلم لیگ (ن) کی جانب سے ایڈووکیٹ سلمان اکرم راجہ پیش ہوں گے۔ سماعت کے دوران قومی اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکر کامران مرتضیٰ بھی عدالت عظمیٰ میں پیش ہوئے اور بتایا کہ وہ اسپیکر سردار ایاز صادق اور چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کی جانب سے پیش ہوئے ہیں جس پر عدالت عظمیٰ نے ریمارکس دیئے کہ ہم نے تو انہیں فریق نہیں بنایا۔

کامران مرتضیٰ نے جواب دیا کہ 6 درخواستوں میں اسپیکر اور چیئرمین سینیٹ کے نام شامل ہیں جس پر چیف جسٹس نے اسپیکر اور چیئرمین سینیٹ کا نام حذف کرنے کا حکم سنایا۔

 

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں