زینب کے قاتل نے عدالت سے سزا میں نرمی کی اپیل کر دی

زینب کے قاتل نے عدالت سے سزا میں نرمی کی اپیل کر دی

لاہور: قصور کی ننھی زینب کے قاتل عمران نے لاہور ہائی کورٹ سے اپیل کی ہے کہ اقرار جرم کرنے کی وجہ سے اس کی سزا میں نرمی کی جائے۔


اپیل کی سماعت لاہور ہائی كورٹ كے جسٹس صداقت علی خان پر مشتمل دو ركنی بینچ نے كی۔ سماعت كے موقع پر زینب كے والد حاجی امین اپنے وكیل اشتیاق چوہدری كے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے۔ ننھی زینب كے قاتل عمران نے سپرنٹنڈنٹ سینٹرل جیل كے توسط سے جیل سے اپیل دائر كی ہے اپیل كے ہمراہ انسداد دہشت گردی عدالت كے فیصلے كی مصدقہ كاپی بھی منسلک ہے۔

مزید پڑھیں: ایم کیو ایم کی ایم پی اے شازیہ فاروق کی خودکشی کی کوشش

مجرم عمران نے تین صفحات پر مشتمل جیل اپیل میں موقف اختیار كیا ہے كہ دوران ٹرائل اس نے عدالت كا قیمتی وقت بچانے كے لیے عدالت كے سامنے اقرار جرم كیا اور ترقی یافتہ ممالک میں اقرار جرم كرنے والے مجرموں كے ساتھ عدالتیں نرم رویہ اختیار كرتی ہیں لیکن اقرار جرم کے باوجود عدالت نے اس كے ساتھ نرم رویہ اختیار نہیں كیا اور اسے سزائے موت اور دیگر سزاؤں کا حکم سنایا تھا۔ 

اپیل میں مزید كہا گیا ہے كہ وہ غربت كے باعث وكیل كی خدمات حاصل نہیں كر سكتا لہذا عدالت عالیہ اس كی اپیل كی سماعت كرتے ہوئے سزا میں نرمی كرے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کا چناؤ 12 مارچ کو ہو گا

لاہور ہائی كورٹ نے قصور واقعے میں ننھی زینب كے قاتل عمران علی كی سزائے موت كے خلاف اپیل كی سماعت كرتے ہوئے مجرم كا عدالتی ریكارڈ اور جیل سپرنٹنڈنٹ سے رپورٹ طلب كر لی۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں