تھر سے کوئلہ نکالنے کا کام مزید تیز

تھر میں اس وقت 800 سے زائد چینی انجینئرز کام کر رہے ہیں، جبکہ آئندہ دو سال کے دوران انجینئرز کی یہ تعداد بڑھ کر 3 ہزار تک پہنچ جائے گی

تھر سے کوئلہ نکالنے کا کام مزید تیز

تھر میں اس وقت 800 سے زائد چینی انجینئرز کام کر رہے ہیں، جبکہ آئندہ دو سال کے دوران انجینئرز کی یہ تعداد بڑھ کر 3 ہزار تک پہنچ جائے گی۔چینی انجینئرز کی سیکیورٹی کے لیے فوج، فرنٹیئر کور (ایف سی) اور اسپیشل کمانڈوز تعینات ہیں۔


حکومت نے تھر سے بجلی کی پیداوار کے لیے ڈیڈ لائن جون 2019 مقرر کر رکھی ہے، 40 میٹر کھدائی مکمل ہوچکی ہے جبکہ کوئلے کے حصول کے لیے 180 میٹر تک کھدائی ہونی ہے۔

تھر میں 152 ارب ٹن کوئلے کی ذخائر ہیں جن سے اگلے 50 سال تک 4 ہزار میگاواٹ بجلی تیار کی جاسکتی ہے۔دو ارب ڈالر سے زائد مالیت کے اس منصوبے میں بجلی کی پیدوار کے لیے پلانٹ کی تنصیب کا کام بھی تیزی سے جاری ہے، جبکہ پلانٹ کی مشینری بھی پہنچ چکی ہے۔

ابتدائی طور پر 300 میگاواٹ بجلی کے دو پلانٹ لگائے جائیں گے، جس سے پیدا ہونے والی بجلی کی قیمت صرف 11 روپے فی یونٹ ہوگی۔