ٹرمپ نے شمالی کوریا کو ایک بار پھر دھمکی دے دی

واشنگٹن: امریکی صدر ٹرمپ نے ایشیا کے پانچ ملکوں کا دورہ شروع کرتے ہوئے ٹوکیو پہنچ کر شمالی کوریا کو ایک بار پھر دھمکی دی ہے۔


تفصیلات کے مطابق امریکی صدر ٹرمپ نے، جنھوں نے ایشیا کے پانچ ملکوں منجملہ جاپان، جنوبی کوریا، چین، ویتنام اور فلپائن کا اپنا بارہ روزہ دورہ شروع کیا ہے اور پہلے مرحلے میں ٹوکیو پہنچ کر شمالی کوریا کو پھر دھمکی دی ہے۔انھوں نے جاپانی وزیراعظم شینزو ایبے کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں شمالی کوریا کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پیونگ یانگ کے مقابلے میں واشنگٹن کے اسٹریٹیجک صبر کا پیمانہ لبریز ہو چکا ہے اور اس کے خلاف ہر قسم کا آپشن میز پر موجود ہے۔

اس موقع پر جاپانی وزیراعظم شینزو ایبے نے بھی شمالی کوریا کے خلاف مزید پابندیاں عائد کرنے اور دباو¿ بڑھائے جانے کی ضرورت پر زور دیا۔

انھوں نے اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ شمالی کوریا کے مقابلے میں امریکہ، جاپان کے ساتھ کھڑا ہے، کہا کہ ٹوکیو کو چاہئے کہ واشنگٹن سے زیادہ سے زیادہ فوجی ہتھیار خریدے۔انھوں نے کہا کہ جاپان، شمالی کوریا کے بارے میں امریکی صدر کی اس پالیسی کی حمایت کرتا ہے کہ ہر قسم کا آپشن میز پر موجود ہے۔جاپانی وزیراعظم شینزوایبے نے کہا کہ ان کے ملک نے شمالی کوریا پر دباو¿ بڑھانے کے لئے اس ملک کی پینتیس تنظیموں اور شخصیات کے اثاثے منجمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

امریکی صدر ٹرمپ نے ایسی حالت میں ٹوکیو کا دورہ کیا ہے کہ جاپان کے عوام نے جزیرہ نمائے کوریا سے متعلق امریکی پالیسیوں کے خلاف شدید احتجاج کیا ہے۔