گلبرگ پولیس اور عزیز بھٹی چوکی پر حملے کی منصوبہ بندی کی تھی : ڈاکٹر عبداللہ کا انکشاف

گلبرگ پولیس اور عزیز بھٹی چوکی پر حملے کی منصوبہ بندی کی تھی : ڈاکٹر عبداللہ کا انکشاف

کراچی :اظہار الحسن پر حملے میں ملوث گرفتار دہشت گرد ڈاکٹر عبداللہ سے تفتیش میں انکشاف ہوا ہے کہ گلبرگ پولیس اور عزیز بھٹی چوکی پر حملے کی منصوبہ بندی کی گئی تھی ٗ تنظیم میں سب تعلیم یافتہ نوجوان شامل ہیں جو کہ کراچی یونیورسٹی ٗ این ای ڈی اور دادو یونیورسٹی سے تعلیم یافتہ ہیں اور افغانستان سے جہادی تربیت لے چکے ہیں


تفصیلات کے مطابق تنظیم انصار الشریعہ کے گرفتار سربراہ ڈاکٹر عبداللہ ہاشمی نے تفتیش میں سنسنی خیز انکشافات کئے ہیں۔ عبداللہ ہاشمی کے مطابق انصارالشریعہ نے2015ء کے آخر میں کام کا آغاز کیا، القاعدہ سے الحاق اور مدد کے لیے عبداللہ بلوچ سے رابطہ کیا گیا،جس نے اپنی مدد آپ کے تحت کام کرنے کو کہا، انصارالشریعہ نے خود کو منوانے کے لیے پولیس کی ٹارگٹ کلنگ کی۔

سربراہ انصارالشریعہ عبداللہ ہاشمی کے مطابق اس کا گروپ10 سے 12 اعلیٰ تعلیم یافتہ لڑکوں پرمشتمل ہے، تمام لڑکے کراچی یونیورسٹی، این ای ڈی اورداوؤ یونیورسٹی سے تعلیم یافتہ ہیں،جو افغانستان سے تربیت لے کر آئے ہیں۔سربراہ انصارالشریعہ ڈاکٹرعبداللہ ہاشمی کے مطابق ان کی تنظیم نے گلبرگ پولیس اورعزیزبھٹی چوکی پر حملے کی منصوبہ بندی کر رکھی تھی۔

عبداللہ ہاشمی کے مطابق خواجہ اظہار پر حملے کے دوران مارا گیا، حسان عرف ولید الیکٹرانک انجینئرتھا اور این ای ڈی یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کررہاتھا، ہلاک ملزم حسان داوؤدیونیورسٹی میں الیکٹرانک سائنس کاٹیچرتھا۔