سپریم کورٹ نے ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کو 2 ماہ کے اندر نمٹانے کا حکم جاری کردیا

ایگزیکٹ کے سربراہ کو اس کیس میں دوبارہ جیل بھی جانا پڑسکتاہے،چیف جسٹس۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کے مقدمات کو سپریم کورٹ نے 2 ماہ کے اندر نمٹانے کا حکم جاری کردیا ہے جبکہ کیس کی دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ایگزیکٹ کے سربراہ کو اس کیس میں دوبارہ جیل بھی جانا پڑسکتاہے ۔

یہ بھی پڑھیں:میرے سٹاف کو کویتی ایئرپورٹ پر ’بھارتی کتے‘ کہا گیا:عدنان سمیع کا دعویٰ

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان نے ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کی سماعت کی اور اس موقع پرایف آئی اے کے ڈی جی نے معزز عدالت کے بتایا کہ شعیب شیخ ٹرائل میں تعاون نہیں کر رہے جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ عدم تعاون کی صورت میں شعیب شیخ کی ضمانت منسوخ کردی جائے۔

یہ بھی پڑھیں:اصغر خان کیس،سابق آرمی چیف جنر(ر)مرزاا سلم بیگ سپریم کورٹ میں پیش ہوگئے

جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ ایگزیکٹ کے سربراہ شعیب شیخ کہاں ہیں، کیا ان کی ضمانت ہو چکی ہے ؟ڈی جی ایف آئی اے نے بتایا کہ تمام مقدمات میں ان کی ضمانت ہو چکی ہے۔چیف جسٹس نے ڈی جی ایف آئی اے سے استفسار کیا کہ 'کیا آپ کو ملزمان سے مزید تحقیقات کرنی ہیں' جس پر انہوں نے کہا کہ ہمیں مزید تحقیقات کی ضرورت نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں:نیب کو غیر موثر کرنے کیلئے وزیراعظم سے بات ہوئی تھی، نواز شریف

چیف جسٹس نے سوال کیا ایگزیکٹ کے کون کون سے کیسز کس عدالت میں زیر التوا ہیں، عدالت نے ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کی تمام تفصیلات طلب کرلیں جب کہ عدالت نے حکم دیا کہ جعلی ڈگری کیس کے مقدمات دو ماہ میں نمٹائے جائیں۔

یہ بھی پڑھیں:اداکار عمران اشرف رشتہ ازدواج میں منسلک ہو گئے

عدالت نے دس روز میں ایگزیکٹ کے چینل کے بول سابق ملازمین کو تنخواہیں دینے اور دس روز میں 10 کروڑ روپے سپریم کورٹ میں جمع کرانے کا بھی حکم دیا۔ چیف جسٹس نے کہا کہ جن افراد کے بقایہ جات ہیں ان کو ادا کرنے ہیں، 10 کروڑ روپے سپریم کورٹ میں جمع نہ کرائے تو نتائج بھگتنا ہوں گے اور ایگزیکٹ کے سربراہ شعیب شیخ کودوبارہ جیل بھی جانا پڑسکتا ہے۔
چیف جسٹس نے سوال کیا کہ ایگزیکٹ کے چینل کے ملازمین کا کتنا دعویٰ ہے جس پر وکیل نے بتایا کہ ملازمین کا دعویٰ 30 کروڑ روپے کا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ ایک ماہ دیا تھا کہ معاملہ حل کریں لیکن اتمام حجت کے لیے ایک روز پہلے میٹنگ کی گئی۔

یہ بھی پڑھیں:مسلم لیگ (ن) کے رکن آزاد کشمیر اسمبلی کے گھر سے ملازمہ کی لاش برآمد
ایگزیکٹ کے وکیل نے کہا کہ دس کروڑ روپے کی رقم جمع کروانا مشکل ہے، کوئی پراپرٹی یا کچھ اور اپنے پاس زرضمانت رکھ لیں۔چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کے لیے کون سا مشکل ہے، 2 ڈگریاں ہی بیچنی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:بالی ووڈ فلمساز ارجن ہنگورانی انتقال کرگئے
شعیب شیخ نے بیان دیا کہ مشکلات کا سامنا کرنا پڑا تو سلمان اقبال نے چینل کو ٹیک اوور کیا، اس لئے دو ماہ کی ادائیگیاں سلمان اقبال کے ذمے ہیں۔بعدازاں سپریم کورٹ نے ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کی سماعت کو دس روز کے لیے ملتوی کردیا ہے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں