نیب کے نئے قانون کے تحت سلیم مانڈوی والا اور اعجاز ہارون کو ریلیف مل گیا

نیب کے نئے قانون کے تحت سلیم مانڈوی والا اور اعجاز ہارون کو ریلیف مل گیا

اسلام آباد: قومی احتساب بیورو (نیب) کے نئے قانون کے تحت سابق ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا اور اعجاز ہارون کو احتساب عدالت سے ریلیف مل گیا۔ 

تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں جج محمد بشیر جعلی اکاؤنٹس سے جڑے کڈنی ہلز ریفرنس سے متعلق درخواستوں پر سماعت ہوئی جس دوران عدالت نے ملزمان کو ریلیف دیدیا۔ 

سابق ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا اور اعجاز ہارون، طارق محمود سمیت سات ملزمان کو نیب ترمیمی بل کے تحت ریلیف ملا اور عدالت نے نیب سیکنڈ ترمیمی ایکٹ 2022ءکے تحت ریفرنس واپس لینے کا حکم دیدیا۔ 

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے درخواستوں پر فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ نیب ترمیمی بل کے تحت ریفرنس عدالت کے دائرہ اختیار میں نہیں آتا۔ 

واضح رہے کہ ریفرنس میں اعجاز ہارون، ندیم مانڈوی والا، طارق محمود سمیت سات ملزمان نامزد تھے جنہوں نے نیب ریفرنس کو چیلنج کر رکھا تھا، احتساب عدالت نے دونوں فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ سنایا۔

مصنف کے بارے میں