جہاں بدعنوانی نظر آئی اس کے خلاف سخت کارروائی ہو گی، چیف جسٹس

جہاں بدعنوانی نظر آئی اس کے خلاف سخت کارروائی ہو گی، چیف جسٹس
شکایت یہ ہے کہ بجلی پیدا ہی نہیں ہوئی لیکن ادائیگیاں کر دی گئیں، جسٹس اعجازالاحسن۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں نجی بجلی گھروں انڈی پینڈنٹ پاور پروڈیوسرز کو اضافی ادائیگیوں سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی تو سیکرٹری توانائی ڈویژن عدالت میں پیش ہوئے۔


جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ ملک میں 10 آئی پی پیز کو 159 ملین (15 کروڑ 90 لاکھ روپے) فی کس اضافی دیے گئے۔ شکایت یہ ہے کہ بجلی پیدا ہی نہیں ہوئی لیکن ادائیگیاں کر دی گئیں۔

سیکرٹری پاور ڈویژن نے جواب دیا کہ حکومت نے آئی پی پیز سے معاہدہ کر رکھا ہے اور کپیسٹی کے مطابق ادائیگی کرتے ہیں جبکہ بجلی نہ خریدیں تب بھی ادائیگی کی جاتی ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ عوام کا پیسہ مفت میں کیوں دیا گیا؟ صرف پاکستان میں ایسے معاہدے چل رہے ہیں اور اربوں روپے بلاوجہ کیوں ادا کرتے ہیں؟ جہاں کرپشن نظر آئی سخت ایکشن ہو گا۔ جسٹس فیصل عرب نے کہا کہ بجلی کے شارٹ فال کے باوجود آئی پی پیز سے بجلی کیوں نہیں لی جاتی؟۔

سپریم کورٹ نے وفاقی وزیر پاور ڈویژن عمر ایوب کو طلب کر لیا۔ چیف جسٹس نے کہا کہ آئی پی پیش کیساتھ معاہدہ گلے کا پھندا بن گیا ہے۔ معاہدہ کی ایسی شرائط نہ جانے کیوں قبول کر لی گئیں۔  معلوم ہونا چاہیے معاہدہ کر کے بجلی کیوں نہ لی گئی جبکہ کھربوں روپے کا سرکلر ڈیٹ (گردشی قرضہ) بن گیا ہے۔ اب ہر کوئی ذمہ داری دوسرے پر ڈالے گا اور عوام کو بجلی ملی نہ صنعتوں کو پھر بھی پیسے پورے دیئے گئے۔