چینی کی قیمت 100 روپے فی کلو سے زائد ہونے کا خدشہ

چینی کی قیمت 100 روپے فی کلو سے زائد ہونے کا خدشہ
کیپشن:   چینی کی قیمت 100 روپے فی کلو سے زائد ہونے کا خدشہ سورس:   فائل فوٹو

اسلام آباد: پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن نے عوام کو 75 روپے فی کلو چینی کی فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے وزیر اعظم کو خط لکھ دیا ہے اور ملک تقریبا 3لاکھ ٹن چینی سے محروم ہو گیا ہے۔

چینی کی قیمت ایک بار پھر 100 سے زائد ہونے کا خدشہ ہے۔ ہفتہ کے روز پاکستان شوگر ملز ایسوسی کی جانب سے وزیر اعظم کو لکھے گئے خط میں کہا گیا ہے کہ حکومتی احکامات کی روشنی میں کرشنگ 30 نومبر سے پندرہ یا بیس روز قبل شروع کی گئی جس کے نتیجے میں گنے سے ریکوری انتہائی کم رہی۔

خط میں مزید کہا گیا ہے کہ حکومت نے یقین دہانی کرائی تھی مڈل مین کو دخل اندازی کی اجازت نہیں ہو گی۔ کہا گیا تھا 200 روپے فی من گنے کی قیمت یقینی بنائی جائے گی اور تمام صوبوں کے کمشنر مڈل مین کا کردار ختم کرانے میں مکمل ناکام رہے۔

گنے کی فی من قیمت 270 سے 300 روپے تک پہنچ چکی ہے۔ چینی کی قیمت ایک بار پھر 100 روپے کلو سے اوپر جانے کا خدشہ ہے۔ وزیراعظم شوگر ملز کو گنے کی حکومت کی مقرر کردہ قیمت پر فراہمی یقینی بنائیں تاکہ عوام کو چینی 75 روپے فی کلو کے مناسب ریٹ پر دستیاب ہو۔