ہمارامجرم ہمیں واپس دو،بڑے اسلامی ملک نے امریکا پر پابندی عائد کر دی

ہمارامجرم ہمیں واپس دو،بڑے اسلامی ملک نے امریکا پر پابندی عائد کر دی

انقرہ:ہمارامجرم ہمیں واپس دو،بڑے اسلامی ملک نے امریکا پر پابندی عائد کر دی،ترکی اور امریکا کے درمیان سفارتی محاذ میں گرما گرمی دیکھنے میں آ رہی ہے دونوں ممالک کے سفارتی حکام نے ویزہ سروسز معطل کر دیں ہیں۔


ترکی اور امریکا کے درمیان تنازعہ شدت اختیار کر گیا،ویزہ سروسز معطل

واشنگٹن میں ترک سفارت خانے نے کہا کہ اسے مشن اور عملے کی سلامتی کے لیے امریکی حکومت کے عزم کا ازسرِ نو جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔اس سے پہلے ترک حکام نے استنبول میں امریکہ کونسلیٹ کے ایک اہلکار کو گذشتہ برس ترکی میں ہونے والی ناکام بغاوت کے مبینہ سرغنہ فتح اللہ گولن کے ساتھ روابط کے الزام میں حراست میں لے لیا تھا۔

امریکی حکومت نے اس اقدام کو بے بنیاد اور دوطرفہ تعلقات کے لیے نقصان دہ قرار دیا تھا۔ترکی کے سرکاری خبررساں ادارے کے مطابق یہ اہلکار ترک شہری تھا۔اتوار کو ایک بیان میں واشنگٹن میں ترک سفارت خانے نے کہا: 'حالیہ واقعات نے ترک حکومت کو مجبور کر دیا ہے کہ وہ ترک مشن اور عملے کی سلامتی کے بارے امریکی حکومت کے عزم کا ازسرِ نو جائزہ لے۔

ترک صدر رجب طیب اردوغان فتح اللہ گولن پر ترکی میں بغاوت کے شعلے بھڑکانے کا الزام عائد کرتے ہیںترک حکومت کا بیان عین وہی ہے جو اس سے پہلے امریکہ نے جاری کیا تھا، صرف ملک کا نام بدل دیا گیا ہے۔

امریکی مشن نے کہا تھا کہ اس نے ترکی میں واقع تمام سفارتی مراکز میں نان امیگرینٹ ویزا سروسز معطل کر دی ہیں۔ترک حکومت کئی مہینوں سے واشنگٹن پر دباو ڈال رہی ہے کہ وہ امریکہ میں مقیم مذہبی رہنما فتح اللہ گولن کو ترکی کے حوالے کر دے، جن پر الزام ہے کہ انھوں نے جولائی 2016 میں ترک حکومت کا تختہ الٹنے کی منصوبہ بندی کی تھی۔