لندن: ناصر جمشید کیخلاف تحقیقات کا دائرہ وسیع

لندن: ناصر جمشید کیخلاف تحقیقات کا دائرہ وسیع

لندن: پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہریار خان کا کہنا ہے کہ ٹیسٹ اوپنر ناصر جمشید کے خلاف برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی وسیع پیمانے پر تحقیقات کررہی ہے۔


ناصر جمشید کانام ایگزٹ کنٹرول لسٹ پر ڈال دیا گیا ہے۔ تحقیقاتی اداروں نے ان کا پاسپورٹ اپنی تحویل میں لے لیا ہے انہیں برطانیہ چھوڑنے کی اجازت نہیں ہے۔

شہریار خان نے کہا کہ اسپاٹ فکسنگ کیس میں ابھی تک تین ہی نام شامل ہیں۔ کچھ اور کرکٹرز کے بارے میں قیاس آرائیاں غلط ہیں۔ کوئی اور پاکستانی کرکٹر اس اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں شامل نہیں ہے۔

برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے کرکٹ اسپاٹ فکسنگ کے معاملے میں جاری تحقیقات کے تناظر میں ناصر جمشید سمیت تین افراد کو حراست میں لیا تھا۔

ان گرفتاریوں کا تعلق پاکستان سپر لیگ کےمیچ فکسنگ اسکینڈل سے ہے انھیں اب اپریل 2017تک ضمانت پر رہائی دی جا چکی ہے۔ این سی اے کے بیان میں ان افراد کی شناخت اور قومیت ظاہر نہیں کی گئی۔

ایک انٹر ویو میں شہریار خان نے کہا کہ خالد لطیف اور شرجیل کے خلاف پی سی بی کا تحقیقاتی ٹریبونل اگلے چند دن میں اپنی تحقیقات شروع کررہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹریبونل کیلئے قوانین بنائے جائینگے اور پہلی سماعت میں کرکٹرز کو طلب کیا جائے گا۔ امید ہے کہ دو ہفتے میں تحقیقات مکمل ہوجائیں گی