دکانوں میں 30فیصد غیرملکی رکھنے کی اجازت ہے، سعودی و زارت محنت

01:13 PM, 11 Aug, 2018

ریاض : وزارت محنت و سماجی بہبود نے سعودائزیشن کے لئے مختص 12شعبوں کی ملازمتوں سے صفائی اور سامان اتارنے والے کارکنان کو استثنیٰ دیدیا۔ وزارت نے مستثنیٰ ملازمتوں کی فہرست جاری کردی۔ سعودائزیشن کیلئے مختص تجارتی مرکز و دکان کی 70فیصد سعودائزیشن کا لائحہ عمل بھی جاری کردیاگیا۔ وزارت نے استثنیٰ کی شرائط سے بھی آجروں اور اجیروں کو آگاہ کردیا۔

یہ بھی پڑھیں:بشریٰ مانیکا کے سابق شوہر نے دوسری شادی کر لی

تفصیلات کے مطابق کسی تجارتی مرکز کی ایک شاخ کے غیر ملکی مدیر کو سعودائزیشن کے فیصلے پر عملدرآمد کی تاریخ سے ایک سال تک کا استثنیٰ حاصل ہوگا۔ بشرطیکہ وہ شاخ کے مدیر کے طور پر کام کررہا ہو اور وہاں ایک سے زیادہ مدیر نہ ہوں۔ اس حوالے سے ایک شرط یہ ہے کہ اس شاخ میں کم ا ز کم 10 سعودی ملازم ہوں اوروہ سب ڈیوٹی کے ایک دورانیہ ہی میں کام کررہے ہوں۔

یہ بھی پڑھیں:سپرئیر گروپ آف کالجز کا مقصد بہترین تعلیمی مواقع فراہم کرنا ہے، پروفیسر ڈاکٹر چوہدری عبد الرحمان

وزارت نے متعلقہ ادارے پر یہ پابندی بھی عائد کی ہے کہ غیر ملکی مدیر کے ساتھ شو روم کا معاون مدیر کسی سعودی کو تعینات کیا جائے تاکہ استثنیٰ کی مدت ختم ہونے کے بعد غیر ملکی مدیر کی جگہ سعودی مدیر خدمات انجام دے سکے۔

یہ بھی پڑھیں:بھارتی اداکارہ سارہ خان کو مختصر لباس پہننے پرسوشل میڈیا پر شدید تنقید کا سامنا

وزارت محنت نے سعودائزیشن والی ملازمتوں سے صفائی اور سامان چڑھانے اتارنے والے کارکنان کو بھی استثنیٰ دیا ہے بشرطیکہ ادارہ 5کارکنان پر مشتمل ہو اور وہاں صفائی کارکن اور سامان چڑھانے اور اتارنے والے ایک سے زیادہ نہ ہوں۔

یہ بھی پڑھیں:خالد مقبول، نسرین جلیل، حیدر عباس اور خوش بخت شجاعت اشتہاری قرار

جہاں تک ایسے اداروں کا تعلق ہے جہاں کارکنان کی تعداد 5سے زیادہ ہو تو ایسی صورت میں غیر ملکی کارکنوں کا تناسب 20فیصد سے زیادہ نہ ہو۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں

 

مزیدخبریں