عدالت نے شریف فیملی کی جنوبی پنجاب سے شوگر ملز کی منتقلی روک دی

عدالت نے شریف فیملی کی جنوبی پنجاب سے شوگر ملز کی منتقلی روک دی

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے شریف فیملی کی جنوبی پنجاب سے شوگر ملز کی منتقلی روک دی تاہم لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف دائر اپیلیں سماعت کے لئے منظورکرتے ہوئے سماعت 18 جنوری تک ملتوی کر دی۔

 

سپریم کورٹ میں شریف فیملی کی شوگرملز کی منتقلی سے متعلق کیس کی سماعت چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے کی ۔ جہانگیر ترین کے وکیل اعتزاز احسن نے عدالت کو کسانوں سے گنا خریدنے کی یقین دہانی کرا دی۔ سپریم کورٹ نے شریف فیملی کی شوگر ملز کھولنے کے لئے ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف حکم امتناع جاری کرنے کی درخواست مسترد کر دی۔ اعتزاز احسن نے عدالت کو یقین دہانی کرائی کہ علاقے کی پانچ شوگر ملز کسانوں کا گنا خرید لیں گی۔ جے ڈی ڈبلیو، آر وائی کے، حمزہ، اشرف، انڈس شوگر ملز گنا خریدیں گی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ جہانگیر ترین یقینی بنائیں کہ کسانوں کا نقصان نہ ہو اور کسانوں کو پورا معاوضہ ملے جو یقین دہانی کرائی جائے اس پر من و عن عمل کیا جائے اور کسانوں کا مفاد مقدس ہے۔ درخواست گزار نے دوران سماعت عدالت کو بتایا کہ جن شوگر ملز کو گنا خریدنے کی اجازت دی ان کی صلاحیت بہت کم ہے۔

 

اعتزاز احسن نے سوال اٹھایا کہ کسانوں کو اخبارات میں اشتہارات دینے کے لئے رقم کس نے دی؟۔ چیف جسٹس نے کہا کسانوں کی لاہور میں جہاں میٹنگ ہوئی اس کی تصویر میرے پاس آ چکی ہے۔

 

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ کسانوں کو وکیل کرنے کے لئے کس نے اسپانسر کیا معلوم ہے۔ بابا رحمتے کے ساتھ سچ بولیں گے تو سب ٹھیک رہے گا جبکہ کمزور چیف جسٹس ہو گا جس کے آنکھ اور کان عدالت کے اندر اور باہر کھلے نہیں ہوں گے۔

 

چیف جسٹس پاکستان نے کہا گنا خریدنے کے عمل کی خود مانیٹرنگ کروں گا اورعالدت گنا خریداری میں کسی قسم کی شکایت پر چیمبر میں سماعت کریں گے۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں