بہاولپور آئل ٹینکر حادثے میں آئی جی موٹرویز شوکت حیات نے موٹروے پولیس کی غفلت کا اعتراف کرلیا

بہاولپور آئل ٹینکر حادثے میں آئی جی موٹرویز شوکت حیات نے موٹروے پولیس کی غفلت کا اعتراف کرلیا

اسلام آباد:بہاولپور آئل ٹینکر حادثے میں آئی جی موٹرویز شوکت حیات نے موٹروے پولیس کی غفلت کا اعتراف کرلیا۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مواصلات کے اجلاس میں شرکا کو احمد پور شرقیہ میں پیش آنے والے آئل ٹینکر سانحے پر بریفنگ دی گئی۔


آئی جی موٹرویز شوکت حیات نے حادثے میں موٹروے پولیس کی غفلت کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ پولیس واقعے کی جگہ پر موجود ہونے کے باوجود اپنی ذمہ داری ادا نہیں کر سکی۔انہوں نے اعتراف کیا کہ واقعے کے بعد ایمبولینس کو اطلاع دی گئی نہ فائر بریگیڈ کو طلب کیا گیاجبکہ پولیس کو بھی اطلاع نہیں دی گئی اور نہ ہی بروقت علاقے کو سیل کیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ کنٹرول روم میں موٹروے کے ساتھ 2 پولیس اہلکار بھی موجود ہوتے ہیں، لیکن حادثے کے دن دونوں پولیس اہلکار غیر حاضر تھے۔

آئی جی موٹرویز نے کہا کہ موٹروے پولیس کی جانب سے تحقیقات کی جا رہی ہے جس کی رپورٹ سامنے آنے کے بعد ذمہ داران کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ان کا کہنا تھا کہ بہت سے آئل ٹینکر کرائے پر لئے جاتے ہیں لیکن کسی ٹینکر کو آئل اٹھانے اور فٹنس سرٹیفکیٹ دینے کا ذمہ دار این ایچ اے یا موٹروے نہیں بلکہ اوگرا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم ڈرائیونگ لائسنس پر مزید سختی کی اور ڈرائیونگ اسکول کھولنے کا کہا، لیکن کہا گیا کہ اسکول کھولنا آپکا اختیار نہیں۔

کمیٹی ارکان نے ٹینکر حادثات پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آئل ٹینکرز کیوں الٹتے ہیں، کیا ڈرائیورز نشے میں ہوتے ہیں۔کمیٹی رکن حامد الحق کا کہنا تھا کہ موجودہ حالات میں آئل ٹینکرز چلتے پھرتے بم ہیں لہٰذا ڈرائیورز کے لائسنس اور آئل ٹینکرز کو فٹنس سرٹیفکیٹ دینا لازم قرار دیا جائے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں۔