افغانستان میں روس، ایران اور پاکستان اپنامقصد حاصل کر نا چاہتے ہیں،جنرل جان نکولسن

افغانستان میں روس، ایران اور پاکستان اپنامقصد حاصل کر نا چاہتے ہیں،جنرل جان نکولسن

کابل :افغانستان میں تعینات اعلی ترین امریکی کمانڈر جنرل جان نکولسن نے کہا ہے کہ روس، پاکستان اور ایران جنگ سے تباہ حال اس ملک میں اپنے اپنے مقاصد کے لیے کوشاں ہیں جس سے دہشت گردی و انتہا پسندی کے خلاف لڑائی پیچیدہ ہو رہی ہے۔امریکی خبررساں ادارے کو دیئے گئے ایک انٹرویو میں جنرل جان نکولسن کا کہنا تھا کہ ہمیں بیرونی عناصر پر تشویش ہے۔


جنرل نکولسن نے روس کے طالبان کے ساتھ رابطوں پرکہا کہ روس طالبان کو جائز قرار دینے اور ان کی حمایت کرتا رہا ہے،دریں اثنا طالبان دہشت گردوں کو معاونت فراہم کرتے ہیں۔ مجھے یہ دیکھ کر بہت افسوس ہوتا ہے کہ روس طالبان اور منشیات کی تجارت سے وابستہ دہشت گردی کی حمایت کر رہا ہے۔

جنرل نکولسن کا بھی کہنا تھا کہ طالبان میں ایسے عناصر ہیں جو ملک میں حقیقت پسندانہ امن کے بارے میں سوچ رکھتے ہیں۔ ان کے بہت سے راہنما افغانوں کے لیے بہتر زندگی دیکھتے ہیں۔امریکی کمانڈر کا کہنا تھا کہ دوسری ایران مغربی افغانستان میں انتہا پسندوں کی حمایت کر رہا ہے۔یہ صورتحال روس کے معاملے سے زیادہ پیچیدہ ہے۔" ایران اور افغانستان میں ایک تعلق کی ضرورت ہے۔

ان دونوں کے درمیان تجارتی سرگرمیوں میں اضافہ ہوا ہے جس کی وجہ سے پاکستان کے ساتھ افغان اقتصادی سرگرمیوں میں کمی بھی دیکھی گئی ہے۔جنرل نکولسن کا کہنا تھا کہ ہم پاکستان سے تمام دہشت گردوں کے خلاف تعاون چاہتے ہیں۔

ہمیں پاکستان میں بیرونی دہشت گردوں کی پناہ گاہوں پر ڈباو ڈالنا ہے۔انھوں نے کہا کہ دہشت گردوں کا خاتمہ خود پاکستان کے لیے اس کے ہاں ہونے والے دہشت گرد حملوں میں لائے گا۔ہم سب پاکستان کے رویے میں تبدیلی کی امید کرتے ہیں۔ یہ خود پاکستان کے مفاد میں ہے۔