آصف زرداری، فریال تالپور کو الیکشن سے پہلے نہ بلایا جائے، چیف جسٹس

 آصف زرداری، فریال تالپور کو الیکشن سے پہلے نہ بلایا جائے، چیف جسٹس

عدالت عظمیٰ نے آصف زرداری اور ان کی ہمشیرہ کا نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا حکم نہیں دیا تھا، چیف جسٹس۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: سپریم کورٹ آف پاکستان میں مبینہ جعلی بینک اکاؤنٹس سے متعلق از خود نوٹس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کو ہدایت کی کہ سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کو الیکشن تک نہ بلایا جائے۔

 

ساتھ ہی چیف  جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالت عظمیٰ نے سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی ہمشیرہ کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں شامل کرنے کا حکم نہیں دیا تھا۔ الیکشن کے بعد کسی کیلئے کوئی استثنیٰ نہیں اور ایف آئی اے دیگر تمام لوگوں سے تفتیش جاری رکھے۔ اسٹیٹ بینک کی بد ترین کارکردگی دیکھ کے شرم آتی ہے۔

 

واضح رہے کہ ایف آئی اے بے نامی اکاؤنٹ سے منی لانڈرنگ کیس میں 32 افراد کے خلاف تحقیقات کر رہی ہے جن میں آصف علی زرداری اور فریال تالپور بھی شامل ہیں، اسی سلسلے میں گزشتہ دنوں نجی بینک کے سابق صدر حسین لوائی کو گرفتار کیا گیا تھا۔

 

جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2 رکنی بینچ نے آج مبینہ جعلی بینک اکاؤنٹس سے متعلق از خود نوٹس کیس کی سماعت کی۔ سماعت کے دوران سابق صدر آصف علی زرداری کے وکیل ایڈووکیٹ فاروق ایچ نائیک عدالت عظمیٰ میں پیش ہوئے۔ دوسری جانب نجی بینک کے سابق صدر حسین لوائی کو بھی سپریم کورٹ میں پیش کیا گیا۔

 

چیف جسٹس نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل سے کہا کہ وہ آرڈر پڑھ کر سنائیں کہ اس میں کہاں لکھا کہ آصف زرداری اور فریال تالپور کا نام ای سی ایل پر ڈالا جائے۔ جسٹس ثاقب نثار نے مزید استفسار کیا کہ کیا یہ دونوں ملزمان کی فہرست میں شامل ہیں؟ جس پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ ان دونوں کا نام فہرست میں شامل نہیں ہے۔

 

چیف سٹس نے ریمارکس دیئے کہ اگر وکلاء کو آرڈر کے سلسلے میں کوئی ابہام تھا تو پوچھ لینا چاہیے تھا۔ ہم نے زرداری اور فریال تالپور کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم نہیں دیا۔

 

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں