سپریم کورٹ نے سعد رضوی کی نظربندی کیخلاف درخواست نمٹا دی

سپریم کورٹ نے سعد رضوی کی نظربندی کیخلاف درخواست نمٹا دی
سورس: فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر

لاہور: سپریم کورٹ نے کالعدم تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے سربراہ حافظ سعد رضوی کی نظربندی کو چیلنج کرنے والی ایک درخواست واپس لینے پر معاملہ نمٹا دیا ہے۔ 

نجی اخبار کے مطابق جسٹس سجاد علی شاہ کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے لاہور رجسٹری میں درخواست کی سماعت کی جس دوران حافظ سعد رضوی کے وکیل برہان معظم ملک نے کہا کہ ایک نظر ثانی بورڈ نے ان کے موکل کی سابقہ نظربندی کو ایک طرف رکھ دیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے 10 جولائی کو ایک نیا نوٹیفکیشن جاری کیا جس میں ٹی ایل پی کے سربراہ کی نظربندی میں مزید 90 دن کی توسیع کی گئی جس پر جسٹس سجاد علی شاہ نے ریمارکس دئیے کہ نظرثانی بورڈ پہلے ہی فوری پٹیشن میں گرفتاری کا معاملہ ایک طرف کرچکا ہے، اس کیساتھ ہی انہوں نے وکیل درخواست واپس لینے کا مشورہ دیا۔ 

سعد رضوی کے وکیل برہان معظم نے درخواست قبول کرنے پر دباؤ نہیں ڈالا اور بینچ نے درخواست واپس لے لینے پر معاملہ نمٹا دیا۔ واضح رہے کہ سعد رضوی کے چچا امیر حسین نے 12 اپریل 2021 کو اپنے بھتیجے کی نظربندی کے حکم کو چیلنج کرتے ہوئے یہ درخواست دائر کی تھی۔

انہوں نے لاہور ہائیکورٹ کے اس حکم کو بھی معطل کردیا جس میں اس نظربندی کے خلاف ان کی درخواست خارج کردی گئی تھی جبکہ نظرثانی بورڈ کے فیصلے کی روشنی میں سعد رضوی کی نظربندی 10 جولائی کو ختم ہونا تھی تاہم لاہور کے ڈپٹی کمشنر نے انسداد دہشت گردی ایکٹ 1997ءکی دفعہ 11 ای ای ای کے تحت ایک نیا نوٹیفکیشن جاری کیا اور سعد رضوی کو 90 دن کیلئے حراست میں لے لیا گیا۔