پاکستان سی پیک معاہدوں پر کوئی نظر ثانی نہیں کر رہا، ترجمان دفتر خارجہ

پاکستان سی پیک معاہدوں پر کوئی نظر ثانی نہیں کر رہا، ترجمان دفتر خارجہ
بھارت سے بات چیت کیلئے تیار ہیں اور تمام معاملات کا حل بات چیت سے ہی چاہتے ہیں، ترجمان۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: ہفتہ وار بریفنگ دیتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ سی پیک سے متعلق چین کے ساتھ ازسرنو معاہدوں کی تجدید کو مکمل طور پر مسترد کر چکے ہیں جب کہ سی پیک معاہدوں پر نظر ثانی کا تاثر بھی مسترد کرتے ہیں۔ پاکستان ان معاہدوں پر کوئی نظر ثانی نہیں کر رہا۔


ترجمان دفتر خارجہ نے بھارت امریکا مشترکہ اعلامیے میں پاکستان پر لگائے گئے الزامات کو بھی مسترد کر دیا۔ امریکی وزیر خارجہ کے دورے سے متعلق بتایا کہ مائیک پومپیو کے دورے میں مختلف معاملات پر تبادلہ خیال ہوا اور مختلف موضوعات پر مذاکرات کا تسلسل ہی آگے بڑھنے کا راستہ ہے۔

ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ بھارت سے بات چیت کے لیے تیار ہیں اور تمام معاملات کا حل بات چیت سے ہی چاہتے ہیں۔

افغانستان سے متعلق ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغان مسئلے کا حل وہاں کے لوگوں کے ہاتھوں تلاش کرنے کی حمایت کرتے ہیں۔ وزیر خارجہ کا پہلا بیرون ملک دورہ افغانستان کا ہے اور وہ پرسوں افغانستان جائیں گے جہاں افغان پاک ایکشن پلان پر تبادلہ خیال کریں گے۔

ڈاکٹر فیصل نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان سعودی عرب کا دورہ کریں گے اور تاہم تاریخ کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ ویزہ کی سختی صرف پاکستان نہیں دیگر کئی ممالک کے ساتھ کی گئی ہے۔ وزیر خارجہ کی سطح پر اس معاملے پر رابطے میں ہیں جب کہ بحرین کے حکام نے تعاون کی یقین دہانی کروائی ہے۔

ایف اے ٹی ایف سے متعلق ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے حوالے سے کافی کام ہو رہا ہے۔