جن خواتین نے اپنی یاداشت تیز کرنی ہے تو وہ اس عمر میں ماں بنیں،نئی تحقیق

جن خواتین نے اپنی یاداشت تیز کرنی ہے تو وہ اس عمر میں ماں بنیں،نئی تحقیق

لاس اینجلس: عام طورپر کہا جاتا ہے کہ  30سال کی عمر کے بعد ماں بننے پر خواتین کو کئی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ لیکن اب ایک نئی تحقیق کے مطابق اگر  خواتین نے دماغ تیز کرنا ہے تو وہ 35 سال کی عمر کے بعد ماں بنیں۔


نئی تحیقیق  کے مطابق اگر کوئی خاتون اپنے آخری بچے کو 35 سال کی عمر کے بعد جنم دیتی ہے تو  اس خاتون کا دماغ تیزہو جاتا ہے. ریسرچ کے مطابق 10 سال سے زیادہ وقت تک ہارمون کی بنیاد كٹراسےپشس کی انٹیک کرنے والوں یا 13 سال سے کم عمر میں جن خواتین کے مخصوص ایام شروع ہوئے ہوں ان کے ساتھ بھی ایسا ہی ہوتا ہے.

امریکہ میں یونیورسٹی آف ساؤتھ کیلی فورنیا کی اسسٹنٹ پروفیسر روكھسانا کریم نے کہا کہ آخری حمل کے وقت عمر کے سلسلے میں یہ پہلی سٹڈی ہے.

انکا مزید کہنا تھا کہ  ریسرچ کے نتائج کے مطابق ہم خواتین کو یہ نہیں کہیں گے کہ وہ فیملی پلاننگ کے لئے 35 سال کی عمر تک انتظار کریں لیکن ہمیں اس بات کے ثبوت ملے ہیں جو بتاتے ہیں کہ دیر سے حمل کرنے کے دماغ پر مثبت اثرات ہوتا ہے.

ریسرچ کے مطابق، 35 سال کی عمر کے بعد آخری حمل والی خواتین کی یادداشت بڑھ جاتی ہے. 24 سال کی عمر یا اس کے بعد پہلا حمل کرنے والی خواتین کا کام کرنے کا طریقہ بہتر ہوتا ہے اور ایسی خواتین کے مسائل کو بہتر طریقے سے حل پاتی ہیں.

نیوویب ڈیسک< News Source