اسرائیل نے بیت المقدس میں قطری ٹی وی چینل الجزیرہ کا دفتر بند کرنے پر غور شروع کردیا

اسرائیل نے بیت المقدس میں قطری ٹی وی چینل الجزیرہ کا دفتر بند کرنے پر غور شروع کردیا

بیت المقدس : الجزیرہ کا دفتر بند کرنے پرغور شروع کیا ہے۔عبرانی اخبار کی رپورٹ کے مطابق خلیجی ممالک کی جانب سے قطر کے بائیکاٹ کے بعد الجزیرہ کی جانب سے جاری اشتعال انگیز مہم کے باعث اس کے دفتر کو بند کرنے پرغور شروع کیا گیا ہے۔ اخبار کے مطابق وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو نے متعقلہ حکام کو ہدایت کی ہے کہ وہ الجزیرہ ٹی وی کے دفتر کو بند کرنے پرغور کریں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ الجزیرہ ٹی وی کے قطر میں قائم دفتر کو بند کرنے کا مقصد خلیجی ملکوں کے درمیان جاری تنازع کو اسرائیل میں ہوا دینے سے روکنا ہے۔ یہ اقدام قطر کو سیاسی تنہائی کا شکار کرنے کی خلیجی کوششوں کے ضمن میں کیا جا رہا ہے۔اس حوالے سے وزارت خارجہ کے شعبہ اطلاعات، داخلی سلامتی کے خفیہ ادارے’شاباک‘ اور سیکیورٹی حکام پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو مقبوضہ بیت المقدس اور 1948ءکے مقبوضہ علاقوں میں قائم الجزیرہ کے دفاتر کو بند کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ کرے گی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ صہیونی ریاست الجزیرہ کے خلاف کارروائی کے لیے دیگر جواز بھی تلاش کررہی ہے۔ ان میں ایک بہانہ پہلے سے اسرائیل کے پاس موجود ہے۔

وہ یہ کہ الجزیرہ فلسطینیوں کی حمایت اور اسرائیلی جرائم کو بے نقاب کرتے ہوئے صہیونی ریاست کے خلاف اشتعال انگیزی پرمبنی مواد نشر کررہا ہے۔ اس لیے الجزیرہ کے دفتر کو بند کردیا جائے۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں۔