چھٹیوں کی خاطر نوجوان نے 37 روز میں چار شادیاں کرلیں

چھٹیوں کی خاطر نوجوان نے 37 روز میں چار شادیاں کرلیں
سورس:   file photo

تائیوان ،دنیابھر میں ملازم پیشہ افراد چھٹیوں اور معاوٖضے کے لئے کئی طریقے اختیار کرتے ہیں لیکن تائیوان میں ایک نوجوان نے چھٹی اور اس دوران معاوضے کے لئے ایک عجیب انداز اپنایا ۔ 

تفصیلات کے مطابق  تائیوان سے تعلق رکھنے والے ایک شخص نے  چھٹیوں کے لیے 37 دن میں ایک ہی عورت سے 4 شادیاں کر ڈالیں۔

تائیوان میں قانون ہے کہ  کسی بھی شخص کو شادی کے وقت کام سے 8 چھٹیاں دی جاتی ہیں اور  ادارہ اس شخص کو ان چھٹیوں کا معاوضہ بھی ادا کیاجاتا ہے ۔ 

تائیوان کے شہری  نے اپنی پہلی شادی پر ملنے والی چھٹیوں کے آخری روز اپنی بیوی کو طلاق دے دی اور اگلے ہی دن دوسری شادی کر  کے قانون کے مطابق ایک بار پھر 8 چھٹیوں کی درخواست دے دی ۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق اس شخص نے چھٹیوں میں توسیع کے لیے ایک ہی عورت سے 37 دن کے اندر  4 مرتبہ شادی کی اور  اسے 3 مرتبہ طلاق دی ۔  متعلقہ شخص معاوضے کے ساتھ 32 چھٹیاں حاصل کرنے میں کامیاب ہوگیا۔

لیکن اس سے پہلے آپ کو یہ سب آسان لگے، آپ کے لیے یہ جاننا ضروری ہے کہ جب تائیوان سے تعلق رکھنے والے اس شخص نے طلاق کے اگلے ہی دن اسی عورت سے شادی کر کے بینک میں (جہاں وہ بطور کلرک ملازمت کرتا تھا) چھٹیاں طلب کیں تو کلرک کی چالاکی کو سمجھتے ہوئے بینک نے مزید چھٹیاں دینے سے انکار کر دیا۔

جس کے بعد کلرک کی جانب سے بینک کے خلاف لیبرکورٹ میں درخواست دائر کی گئی، درخواست میں کلرک نے امپلائر  پر قانون توڑنے کا الزام لگایا۔بعد ازاں لیبر بیورو کی جانب سے تحقیقات کا آغاز ہوا اور ثابت ہوا کہ بینک نے قانون کی خلاف ورزی کی جس پر بینک کے مالک پر  700 ڈالر کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا۔