حج صرف عبادت، سیاسی رنگ دینے کی کوشش قبول نہیں:سعودی عرب

حج صرف عبادت، سیاسی رنگ دینے کی کوشش قبول نہیں:سعودی عرب

ریاض:سعودی عرب کی حکومت نے حج جیسی عظیم المرتبت عبادت کو سیاسی رنگ دینے کی غیرملکی سازشوں کو ایک بار پھر مسترد کردیا ہے۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی کابینہ کا اجلاس ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز کی زیرصدارت جدہ کے السلام محل میں ہوا۔


اجلاس میں تمام عازمین حج کو بلا تفریق مناسک حج کی ادائیگی کے دوران اور ان کی وطن واپسی تک ہرممکن سہولت فراہم کرنے کا اعلان کیا گیا۔ اجلاس کے بعد پریس کو جاری کردہ ایک بیان میں واضح طور پرکہا گیا ہے کہ سعودی عرب حج جیسی مقدس عبادت کو سیاست کی بھینٹ چڑھانے کے مطالبات کو قبول نہیں کرے گا چاہے حالات کتنے ہی کٹھن کیوں نہ ہوجائیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’حجاج اور معتمرین اللہ کی طرف سے بھیجے گئے مہمان ہیں۔ جب وہ بلائیں تو ان کا جواب دیا جائے اور جب وہ استغفار کریں تو ان کے لیے مغفرت طلب کی جائے‘۔ولی عہد نے کابینہ کو فرانسیسی صدر ایمانویل ماکروں کے ساتھ ہونے والی حالیہ ٹیلیفونک بات چیت کے بارے میں بھی بتایا۔

انہوں نے کہا کہ فرانسیسی صدر کے ساتھ ہونے والی ٹیلیفونک بات چیت میں انسداد دہشت گردی اور انتہا پسندی کی روک تھام کے لیے مل کر کوششیں کرنے، دہشت گردی کے سوتوں کو خشک کرنے، دونوں ملکوں کی سلامتی اور خود مختاری کو یقینی بنانے، خطے میں امن استحکام برقرار رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔ ولی عہد نےعراقی وزیر تیل انجینیر جبار اللعیبی کے ساتھ ہونے والیملاقات کا بھی احوال بیان کیا۔ انہوں نے کہا کہ مملکت پڑوسی ملک عراق کے استحکام اور ترقی کا خواہاں ہے۔ سعودی عرب عراق کی تعمیر وترقی میں حصہ لے کر تمام شعبوں میں اسے تقویت دینے کے لیے پرعزم ہے۔