بلوچستان میں بارشوں اور سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 196 ہو گئی 

بلوچستان میں بارشوں اور سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 196 ہو گئی 

کوئٹہ: بلوچستان میں 24 گھنٹوں کے دوران جاری بارشوں اور سیلاب کے باعث مزید 8 افراد جاں بحق ہو گئے جس کے بعد اموات کی مجموعی تعداد 196 جبکہ زخمیوں کی تعداد 81 ہو گئی ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق پراونشل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) بلوچستان کی جاری کردہ رپورٹ کے مطابق اتوار کو قلعہ عبداللہ سے ایک جبکہ موسیٰ خیل سے 7 اموات کی تصدیق ہوئی جبکہ صوبے میں ہلاک مویشوں کی تعداد ایک لاکھ سے زائد ہوگئی اور 19ہزار سے زائد مکانات بھی متاثر ہو چکے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق ڈیرہ بگٹی میں 3 افراد کے زخمی ہونے کے بعد زخمی ہونے والوں کی مجموعی تعداد 81 ہو گئی ہے۔ کوہلو میں 10 مکانات مکمل اور 15جزوی طور پر متاثر ہوئے جبکہ قلعہ عبداللہ میں 30مکانات مکمل جبکہ 15 جزوی طور پر متاثر ہوئے ہیں۔ 

اسی طرح ڈیرہ بگٹی میں بھی 5 مکانات مکمل طور پر تباہ ہوگئے جس کے بعد صوبے میں سیلاب اور بارشوں کے باعث تباہ ہونے والے مکانات کی تعداد 19 ہزار 767 ہو گئی ہے، ان میں سے 5 ہزار 107 مکمل جبکہ 14 ہزار 660 جزوی طور پر متاثر ہوئے ہیں۔

پی ڈی ایم اے بلوچستان کی رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ صوبے میں سیلاب کے باعث ایک لاکھ 7ہزار 377 مویشی ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ 690 کلو میٹر روڈ اور 18 پل بھی تباہ ہوئے ہیں۔

دوسری جانب سیلابی ریلوں سے موسیٰ خیل، بارکھان اور کوہلو کے علاقوں میں بڑے پیمانے پر نقصان ہوا، موسیٰ خیل میں اندرپوڑ ڈیم ٹوٹ گیا جس کے باعث سیلابی پانی دیہاتوں میں داخل ہو گیا۔ 

سیلابی ریلے کے باعث 2 بڑے پل بہنے سے موسیٰ خیل کا ملک بھر سے زمینی رابطہ منقع ہو گیا، پنجاب اور بلوچستان کے سرحدی علاقوں میں موصلاتی نظام بھی متاثر ہوا ہے۔ 

کوہ سلیمان اور بلوچستان سے آنے والے سیلابی ریلوں سے تونسہ کے 10 سے زائد دیہات ڈوب گئے، دو مقامات پر رابطہ سڑکیں بہہ گئیں، قبائلی علاقوں کا تونسہ سے زمینی رابطہ منقطع ہو گیا۔ 

مصنف کے بارے میں