خط بنام بنگلہ دیش(سابقہ مشرقی پاکستان)

 خط بنام بنگلہ دیش(سابقہ مشرقی پاکستان)

                                                                                                                                                                                            خط بنام بنگلہ دیش(سابقہ مشرقی پاکستان)


عزیزم بنگلہ دیش                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                            

12/16/2016 

امید ہے آج بنگلہ دیش میں لوگ ہماری شکست کا دن خوب جوش وجذبے  سے منا رہے ہونگے۔ آج دسمبر کی سولہ تاریخ ہے لیکن میرے ہاں میدانی علا قوں میں ابھی اتنی سردی نہیں آئی جتنی سولہ دسمبر 1971ءکو تھی۔ وہ یخ بستہ رات اور بحر ہند کے سرد پانی کی خاموشی تو آج بھی مجھے یاد ہے۔ اگلے دن کی وحشت اور ویرانی کبھی ذہن سے نکلتی، میں بہت سالوں سے تمہیں خط لکھتا آ رہا ہوں۔ مگر یونہی آڑی ترچھی لائنیں کھینچ کر ٹھہر جاتا ہوں۔ میں جانتا ہوں تمہارے اور میرے خون کے رشتے ہیں لاکھ دوریاں سہی مگر یہ انمول رشتے ختم تو نہیں ہو سکتے۔ ہماری آزادی کی سیاسی جدوجہد تمہارے ہی گھر سے تو شروع ہوئی تھی اور پھر آزادی حاصل کرنے کے لئے پہلا پروانہ تو مولوی اے ۔ کے فضل الحق نے پڑھا تھا۔

میں جانتا ہوں شک کا پہلا بیج بھی قائد اعظم محمد علی جناح کی فہم و فراست کو شک کی نگاہ سے دیکھنا تھا جو ڈھاکہ یونیورسٹی میں بویا گیا تھا ۔

خیر چھوڑومیں آ ج دوہرا غم منا رہا ہوں ایک تم سے جدا ہوئے چالیس سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے اور دوسرا سولہ دسمبر2014 کے ہی دن دشمن نے اسی دن کا انتخاب ہی کیوں کیا جب میں تمہارے غم میں مبتلا ہوتا ہوں؟  اسی دن پشاور کے ایک سکول میں اس قدر وحشت اور بربریت کا مظاہرہ کیا گیا اور ان معصوم بچوں کو صفِ اول کے شہیدوں میں لا کھڑا کیا۔

ایک دسمبر کو تم اور میں تقسیم ہوئے تھے اور ایک دسمبر نے  مغربوں والوں کومتحد کر دیا پھر بھی میں چاہتا ہوں  1971اور  2014 والا دسمبر کبھی نہ آئے

مجھے دسمبر بہت پسند تھا مگر اب وحشت ہوتی ہے۔ دوسری طرف تمہارے چند لوگ مسلسل ایسی حرکتیں کر رہے ہیں جیسے ابھی بھی بدلے کی آگ باقی ہے اور وہ لوگ جو ہمیں متحد دیکھنا چاہتے تھے ۔ ان سفید بالوں والے بزرگوں کو تختہ دا رپر لٹکا دیا گیا۔ ایسی کون سی مجبوری تھی جو یہ سب کرنا پڑا۔ یہ سب کس کی کارستانی ہے مجھے معلوم ہے۔ جو تمہارے لوگوں کو ماضی میں اکساتے تھے وہ آج بھی یہی کر رہے ہیں۔ اب تو مجیب الرحمٰن صاحب کے چھ نکات بھی پورے ہوگئے ہم نے تمہاری آوارگی کوبھی تسلیم کر لیا۔90ہزار نے قیدو بند کی صوبتیں بھی برداشت کیں۔ تم نے عالمی تنہائی بھی برداشت کروائی اپنوں کی بےوفائی پر دشمن سے نظریں ملانے کے قابل بھی نہ رہے۔ آج تو کوئی سیاسی زیادتی نہیں کر رہا۔ کسی نے تمہاری معیشت پر ڈاکہ نہیں ڈالا۔ آج تو کسی بنگالی وزیر اعظم کو برطرف نہیں کیا گیا۔ اب تو میری سڑکوں سے پٹ سن کی خوشبو بھی نہیں آتی ۔ اب تو کسی فوجی نے بنگالی کو حقارت بھری نگاہوں سے نہیں دیکھا اب قومی زبان کا مسئلہ بھی نہیں ہے۔  آج تو تمہاری نصاب کی کتابوں میں ہماری آزادی کے متعلق حق ادا کرنے والا کوئی مضمون بھی نہیں ہے۔ آج تمہاری معیشت ہم سے بہتر حالت میں ہے۔  یونس جیسے معیشت دان تمہارے اندر بستے ہیں۔ اب تو تمہارے سیاست دان خودمختار ہیں۔ تمہارا اپنا قومی نشان ہے اب تو وہاں جھنڈے میں نہ چاند ہے نہ تارا ۔

میں وہ شرمندگی کیسے بھول سکتا ہوں جب دشمن نے مشرق کے بپھرے لوگوں سے بچانے کے لئے میرے فوجیوں کو اپنی حفاظت میں لے رکھا تھا۔

وہ بپھرے لوگ جنہیں مکتی باہنی کا نام دیا گیا تھا جو سلوک سکھوں اور ہندوﺅں نے 1947ءمیری بیٹیوں کے ساتھ کیا اُس کے بدتر سلوک بگڑے ہوئے بھائیوں نے اپنے مغربی علاقے سے تعلق رکھنے والی بہنوں سے کیا اس دن فرشتوں نے بھی اپنے منہ چھپا لیے ہونگے ۔مجھے دسمبر کی سرد ترین رات میں بھی اپنا پسینہ یاد ہے۔اقتدار والوں کی غلطیوں کی سزا عام اور نہتے لوگوں کو کیوں دی گئی؟ کوئی بھی مغربی علاقے کا عام آدمی تمہارے لوگوں کے خلاف نہیں تھا بلکہ جو وہاں سے یہاں آئے انہوں نے نام پیدا کیا آخر یہ ان کا اپنا ہی گھر تو تھا اور آج بھی ہے تم نے صرف میرے ہی بدن کو زخمی نہیں کیا بلکہ امت کو شرمندہ کر دیا۔میرے بدن پر گھاﺅ ضرور موجود ہیں مگر یہ ہمیشہ کے لئے نہیں ہیں۔

                                    تم نمک پاشی کی کوششیوں کو ترک کر دو ۔ اپنی نصاب کی کتابوں سے نفرت کے مضمون خارج کرو

اب تو میرے محافظوں میں ایسے سپوت موجود ہیں جو بگڑے ہوﺅں کا احتساب کر رہے ہیں تم بھی اپنی حد تک بدلہ لے چکے ہو تم دور سہی مگر آج بھی دل تو یہی چاہتا ہے۔ تمہیں گلے لگا لوں اور جدائی کے سارے غم بھلا دوں مجھے تمہاری سوندھی سوندھی ہوائیں یاد آتی ہیں میں مشرق سے چلنے والی ہواﺅں سے تمہارے راز پوچھتا ہوں۔ مجھے بنگالی رس گلے بہت یاد آتے ہیں۔ مجھے ڈھاکہ کی اداس شامیں یاد آتی ہیں۔ مجھے تیرے رنگیں آنچلوں کے رنگ آج بھی یاد ہیں تیرے دریاﺅں کی روانی کیسے بھول سکتا ہوں سندر بن کے جنگلات کی خوبصورتی جہاں بنگال کا شیر دھاڑتا ہے۔ کون بچ سکتا ہے بنگال کی ساحرہ کے جادو سے؟ خوشیوں میں گائے جانے والے بنگالی گیت آج بھی میری بھولی بسری یادوں میں رس گھولتے ہیں۔

یہ تو اقتدار کی ہوس تھی جو اُدھر بھی موجود تھی اور اِدھر بھی۔۔۔ حقوق کی جنگ میں سقراط نے زہر کا پیالہ پی کر اور منصورحلاج نے پھانسی لٹک کر لڑی تھی۔

خیر ہم ایک ہی تسبیح کے دانے ہیں جو اچانک ٹوٹ گئی یاد رکھو تسبیح کے دانے علیحدہ ضرور ہوتے ہیں مگر جس لڑی میں وہ پروئے جاتے ہیں۔ وہ ایک ہی ہوتی ہے علیحدگی سے زیادہ بری بات عداوت ہے ۔ مجھے بڑی امید ہے کوئی دن ایسا بھی ہو گا کوئی اس لڑی کو پھر سے پرو دے گا۔ ہم سب اکٹھے ہونگے ایک دستر خوان پر کھانا سجے گا سارے غم بھلا دئیے جائیں گے۔ سارے تعلق پھر سے جوڑ دئیے جائیں گے۔ یاد رکھو اپنی سوچ پر ان لوگوں کو حاوی نہ ہونے دینا جو یہ سب نہیں چاہتے ۔

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      والسلام پاکستان

عبدالروف< Blogger

عبدالرئوف بلاگر اور کالم نگار ہیں