گھریلو ملزم کی موت تشدد نہیں بیماری سے ہوئی،ایم پی اے شاہجہاں کا دعویٰ

لاہور: مسلم لیگ کی رکن پنجاب اسمبلی شاہ جہاں نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کے گھر میں کام کرنے والے کمسن ملازم کی موت تشدد سے نہیں بلکہ بیماری سے ہوئی۔گزشتہ دنوں مسلم لیگ کی ایم پی اے شاہ جہاں کے گھرسے کمسن ملازم کی لاش بوری میں برآمد ہوئی تھی جس کوتشدد سے ہلاک کرنے کا انکشاف ہواتھا۔واقعے کے بعد اس کا مقدمہ مقتول لڑکے کے والد کی مدعیت میں درج کیاگیاتھاجس میں ایم پی اے کی بیٹی فوزیہ کو نامزد کیاگیاجبکہ فوزیہ نے اسی روزمقامی عدالت سے ضمانت قبل از گرفتاری حاصل کرلی تھی۔

رکن صوبائی اسمبلی شاہ جہاں نے ملازم کی موت کے حوالے سے اپنی بیٹی فوزیہ پرلگنے والے الزام کو بے بنیادقرار دے دیا ہے۔انہوں نے کہاکہ 16 سالہ اختر بیماری کے باوجود ڈاکٹر کے پاس جانے کے لیے تیار نہیں تھاجس کے باعث وہ بیماری کو برداشت نہ کرسکا،اس کی موت میں وہ یاان کی بیٹی کسی قسم کی ذمہ دار نہیں۔واضح رہے کہ 16 سالہ اخترکی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں اس تشدد ثابت ہواہے اوراس کے جسم پر تشددکے نشانات پائے گئے ہیں۔

مصنف کے بارے میں