یوسف رضا گیلانی کا الیکشن کالعدم قرار دینے کی درخواست پر سماعت 20 ستمبر تک ملتوی 

یوسف رضا گیلانی کا الیکشن کالعدم قرار دینے کی درخواست پر سماعت 20 ستمبر تک ملتوی 
سورس: فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر

اسلام آباد: الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے سابق وزیراعظم اور پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی کا الیکشن کالعدم قرار دینے کی درخواست کی سماعت 20 ستمبر تک ملتوی کر دی ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق دوران سماعت الیکشن کمیشن آف پاکستان کے نمائندے الطاف ابراہیم قریشی نے کہاکہ یہ دونوں ارکان مان چکے ہیں کہ ویڈیو میں ہم ہیں، ملیکہ بخاری نے کہا کہ علی حیدر گیلانی بھی مان چکے ہیں کہ ویڈیو میں وہ ہیں جبکہ بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ درخواست گزار کہتے ہیں کہ الیکشن کے نتائج کے 60 دن کے بعد الیکشن کالعدم نہیں ہو سکتا۔

وکیل حسن مان نے جواب دیا کہ شکست کھانے والے امیداور نے الیکشن ٹریبونل میں کوئی درخواست دائر نہیں کی جس پر الطاف ابراہیم قریشی نے استفسار کیا کہ کیا آپ کے پاس کوئی اضافی شواہد ہیں؟اس پر بیرسٹر علی ظفر نے جواب دیا کہ آپ ہمیں ایک دن کی مہلت دیں، ہم اضافی شواہد دے دیتے ہیں۔

وکیل حسن مان نے کہا کہ درخواست گزاروں کو بہت بار مہلت دی گئی جس پر ملیکہ بخاری نے کہا کہ ہم نے ویڈیو کے ساتھ بہت شواہد جمع کرائے، اس کیس میں 60 دن کی مدت نہیں بنتی، اس پر الطاف ابراہیم قریشی نے کہا کہ آپ فیصلہ کر لیں کہ آج یہ کیس سننا ہے کیونکہ اس کے بعد یہ بینچ نہیں رہے گا۔

وکیل حسن مان نے جواب دیا کہ ہم تیار ہیں، آپ یہ کیس آج سن لیں، ہمارا میڈیا ٹرائل کیا جا رہا ہے جبکہ بیرسٹر علی ظفر نے استدعا کی کہ آپ اگلی تاریخ دیدیں۔ الطاف ابراہیم قریشی نے کہا کہ بینچ نے سب کو دیکھ کر چلنا ہے، اگر ایک طرف جذبات ہیں تو دوسری طرف بھی جذبات ہیں۔

یوسف رضا گیلانی کے وکیل نے استدعا کی کہ ہماری مصروفیات ہیں، لہٰذا آپ ستمبر کی نئی تاریخ دیدیں جس پر الیکشن کمیشن آف پاکستان نے یوسف رضا گیلانی کا الیکشن کالعدم قرار دینے کی سماعت 20 ستمبر تک ملتوی کر دی۔