مونس الٰہی کا خودایف آئی اے دفتر پیش ہونے کا فیصلہ

مونس الٰہی کا خودایف آئی اے دفتر پیش ہونے کا فیصلہ

لاہور: پاکستان مسلم لیگ ق کے مرکزی رہنما وسابق وفاقی وزیر مونس الٰہی نے خودایف آئی اے دفتر پیش ہونے کا فیصلہ کر لیا۔

ایف آئی اے کی جانب سے منی لانڈرنگ کے الزام میں مقدمہ درج ہونے کے بعد مونس الٰہی نے ردِعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ  انہوں نے مجھے کیا گرفتار کرنا ہے میں خود ایف آئی اے دفتر جا رہا ہوں۔پہلے بھی ایسی انتقامی کاروائیوں کا سامنا کر چکا ہوں۔ مونس الٰہی نے کہا کہ شریفوں کی اصلیت کو جانتے تھے اسی لیے کسی لالچ میں نہیں آئے، ن لیگ کچھ بھی کر لے عمران خان کے ساتھ کھڑا ہوں اور رہوں گا۔ 

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے ساتھ جب جانے کا فیصلہ کیا تو اس بات کا پتہ تھا کہ شریفوں نے اس طرح کی حرکات کرنی ہیں۔ عمران خان کے ساتھ اتحاد کیا ہے اب انتقامی کاروائیوں کو جھیلنے کیلئے تیار ہوں۔ انکا مزید کہنا تھا کہ مقدمہ درج ہونے سے پہلے ایف آئی اے کی طرف سے کوئی نوٹس، رابطہ، فون کال نہیں کی گئی، میرے تمام اثاثے ڈکلیئر ہیں۔ 

مصنف کے بارے میں