مریم نواز کی گرفتاری 7 اپریل تک ٹل گئی

مریم نواز کی گرفتاری 7 اپریل تک ٹل گئی
کیپشن:   مریم نواز کی گرفتاری 7 اپریل تک ٹل گئی سورس:   file

لاہور: نیب کی طرف سے  نائب صدر مسلم لیگ ن  مریم نواز کی ضمانت منسوخی کیلئے ہائیکورٹ میں دائر درخواست پر  مختصر سماعت ہوئی۔۔جسٹس سرفراز ڈوگر کی سربراہی میں دو رکنی بنچ  نے سماعت کی۔ہائیکورٹ نے درخواست باقاعدہ سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے مریم نواز کو 7 اپریل کو طلب کرلیا۔

نیب نے  اپنی درخواست میں موقف اختیار کیا کہ مریم نواز شوگر ملز کیس میں ضمانت پر رہا ہونے کے بعد مسلسل ریاستی اداروں کیخلاف پروپیگنڈہ کر رہی ہیں، انہیں چوہدری شوگر ملز کیس میں دستاویزات طلبی کیلئے نوٹس بھجوائے گئے جس کوئی جواب نہیں دیا گیا۔ 

 چیئرمین نیب نے ڈپٹی پراسکیوٹر جنرل پنجاب کی وساطت سے لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کی ہے،درخواست میں مریم نواز اور وزارت داخلہ کو فریق بنایا گیا ہے، درخواست میں موقف اپنایا گیا کہ مریم نواز چوہدری شوگر ملز کیس اور منی لارنڈرنگ کیس میں لاہور ہائیکورٹ سے ضمانت پر رہا ہیں۔

 مریم نواز ضمانت پر رہا ہونے کے بعد مسلسل ریاستی اداروں پر حملے کر رہی ہیں، مریم نواز اپنے ہتھکنڈوں سے عوام میں یہ تاثر دے رہی ہیں کہ ریاستی ادارے غیر فعال ہو چکے ہیں، مریم نواز جان بوجھ کر ریاستی اداروں کی ساکھ خراب ہونے کے بیانات دے رہی ہیں، وہ سوشل میڈیا اورالیکٹرانک میڈیا کے ذریعے بھی ریاستی اداروں کیخلاف بیان بازی اورریاست مخالفت پراپیگنڈہ کر رہی ہیں۔

مریم نواز کو چوہدری شوگر ملز کیس کے حوالے سے دستاویزات کی طلبی کیلئے 10 جنوری 2020 ءکو نوٹس بھجوائے گئے تھے لیکن مریم نواز نے 10 جنوری 2020ءکے نیب کے نوٹسوں پر نہ کوئی توجہ دی اور نہ ہی مطلوبہ ریکارڈ فراہم کیا۔

مریم نواز کے دستاویزات فراہم نہ کرنے پر 11 اگست 2020ءکو مریم نواز کو ذاتی حیثیت میں طلب کیا گیا تھا لیکن مریم نواز نے اپنی سیاسی طاقت کا استعمال کرتے ہوئے نیب آفس پر حملہ کروایا۔

  

اس دوران مریم نواز کے کارکنوں نے پولیس اور نیب آفس پر پتھراؤ کیا جس کا مقدمہ علیحدہ سے درج کیا جاچکا ہے،مریم نواز پیش نہ ہو کر نیب کی تحقیقات میں رکاوٹ ڈال رہی ہیں لہٰذا انکی ضمانت منسوخ کی جائے۔