پیپلزپارٹی نے زیادتی کے مجرم کو سرعام پھانسی دینے کی مخالفت کر دی

پیپلزپارٹی نے زیادتی کے مجرم کو سرعام پھانسی دینے کی مخالفت کر دی
پورے ملک کی توجہ اس طرف مبذول کی جا رہی ہے کہ سرعام پھانسی ہو گی، شیری رحمان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: سینیٹ میں خطاب کرتے ہوئے پیپلزپارٹی کی سینیٹر شیری رحمان کا کہنا تھا کہ سی سی پی او کہتے رہے وہ خاتون رات کو باہر گئی کیوں۔ نئے پاکستان سے پیغام دیا گیا کہ خاتون اور بچے تحفظ کے حقدار نہیں اور ملزم عابد علی تو کھلے عام پھر رہا ہے اور ابھی تک اصل مجرم گرفتار نہیں ہوا۔


انہوں نے کہا کہ پیغام آیا ہے کہ سرعام پھانسی دی جائے لیکن میری جماعت اس پر یقین نہیں رکھتی، پورے ملک کی توجہ اس طرف مبذول کی جا رہی ہے کہ سرعام پھانسی ہو گی، ضیا دور میں سرعام پھانسی دی گئی اور سرعام پھانسی سے جرائم کم نہیں ہوئے بلکہ بڑھے۔

شیری رحمان کا کہنا تھا کہ یہ ایک سرکس تھا جو ضیا الحق نے لگایا تھا اور ایک بچے پپو کو ریپ کرنے والوں کو لاہور میں سرعام پھانسی دی گئی۔ اس کے فوراً بعد ریپ بڑھا اور ساتھ ہی 11 کیسز رپورٹ ہوئے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ سزا تو ان اہل کاروں کو ہونی چاہیے جو کہتے ہیں کہ عورت کیوں باہر نکلی۔

سینیٹ میں خطاب کرتے ہوئے سینیٹر رضا ربانی کا کہنا تھا کہ سرعام پھانسی سے معاشرہ مزید ظالم ہو گا اور سرعام پھانسی کیا ضیا نے نہیں دی تھی، کیا ریپ اور جرائم ختم ہو گئے تھے۔ ضیا نے کیا سیاسی کارکنوں کو میلے لگوا کر کوڑے نہیں لگوائے تھے، کوڑے لگوانے سے کیا سیاسی تحریکیں ختم ہو گئی تھیں۔ 

انہوں نے کہا کہ اس کا حل سرعام پھانسی میں نہیں ہے بلکہ قانون سازی سے کچھ نہیں ہو گا، آپ نے بل پاس کیے لیکن ان پرعملدرآمد نہیں ہوا اور اگر حکومت سی سی پی او کو ہٹائے گی تو یہ اس سوچ پر طمانچہ ہو گا۔

ان کا کہنا تھا کہ اعتزاز احسن نے کہا تھا کہ ریاست ہو گی ماں کے جیسی لیکن یہاں ریاست ڈائن جیسی بن گئی ہے اور ہم آج خوشی سے کہہ رہے ہیں کہ مجرم پکڑے گئے۔

خیال رہے کہ موٹروے پر خاتون سے زیادتی کے واقعے پر عوام میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے۔ سوشل میڈیا پر عوام نے مجرموں کو سرعام پھانسی دینے کا مطالبہ کیا ہے اور یہ مطالبہ زور پکڑ رہا ہے۔

واضح رہے کہ 9 ستمبر کو لاہور کے علاقے گجر پورہ میں موٹر وے پر خاتون کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنانے کا واقعہ پیش آیا۔