سائنسدانوں نے انکشاف کیا کہ ہمارا چاند سکڑ رہا ہے۔ لیکن پریشانی کی کوئی بات نہیں کیونکہ اس کے سکڑنے کی رفتار انتہائی سست ہے۔ سانسدانوں نے یہ دعوٰی چاند کے گرد گردش کرتے سیارے سے ملنے والی تصویروں کے تجزئے کے بعد کیا ہے۔

 گزشتہ ایک ارب سالوں میں چاند کی سطح پر موجود دراڑوں یا فالٹ لائننر کے ٹکرے ایک دوسرے کے قریب آ گئی ہیں۔سائنسدان چاند کی سطح پر ٹکڑوں کے سکڑنے کی وجہ اس کی اندرونی سطح کے ٹھنڈے ہونے کو بھی قرار دے رہے ہیں۔

اُن کا یہ بھی کہنا ہے کہ چاند کہیں غائب نہیں ہونے والا اور سکڑنے کا یہ عمل اس قدر آہستہ ہے کہ اس

مصنف کے بارے میں