سنگین غداری کیس:پرویز مشرف نے خصوصی عدالت کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا

سنگین غداری کیس:پرویز مشرف نے خصوصی عدالت کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا

اسلام آباد:خصوصی عدالت کا فیصلہ سابق صدر پرویز مشرف نے سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا ہے۔


تفصیلات کے مطابق پرویزمشرف کی جانب سے دائر درخواست میں وفاق اورخصوصی عدالت کو فریق بنایا گیا ہے۔

عدالت عظمیٰ سے درخواست کی گئی ہے کہ خصوصی عدالت کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے۔درخواستگزار نے موقف اپنایا کہ خصوصی عدالت نے غداری کیس کا ٹرائل مکمل کرنے میں آئین کی 6 بار خلاف ورزی کی۔

پرویزمشرف کا موقف ہے کہ وہ خصوصی عدالت کے 17 دسمبر کے فیصلے سے مطمئن نہیں ہیں۔ایڈووکیٹ سلمان صفدر کے توسط سے دائر 65 صفحات پر مشتمل اپیل میں موقف اپنایا گیا کہ ملزم کو فیئرٹرائل کا حق نہیں دیا گیا، خصوصی عدالت کی تشکیل بھی غیرآئینی تھی۔

پرویز مشرف نے درخواست میں کہا کہ غداری کیس مقدمہ کی کابینہ سے منظوری بھی نہیں لی گئی، خصوصی عدالت نے بیان ریکارڈ کرانے کا موقع نہیں دیا۔

متن میں درج ہے کہ اپیل دائر کرنے کا مقصد یہ ہے کہ انصاف کا قتل نہ ہو۔

خیال رہے کہ سپریم کورٹ کے حکم پر بنائی گئی خصوصی عدالت نے 17 دسمبر کو پرویز مشرف کو سنگین غداری کا مرتکب ٹھہراتے ہوئے انھیں آئین پاکستان کے آرٹیکل چھ کے تحت سزائے موت دینے کا حکم دیا تھا۔

لاہور ہائی کورٹ نے سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کی درخواست پر سنگین غداری کیس میں سزائے موت سنانے والی خصوصی عدالت کی تشکیل کو غیرقانونی قرار دے دیا ہے۔

پرویز مشرف نے سزائےموت پر رحم کی اپیل صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی کو ارسال کر رکھی ہے جس میں مو¿قف اپنایا گیا ہے کہ غیرقانونی طریقے سے سزا دی گئی اور انہیں شفاف کا ٹرائل کا حق نہیں دیا گیا۔