بھارتی دہشتگردی کے ثبوت پاکستان نے سلامتی کونسل کے مستقل رکن ملکوں کے سفیروں کو دیدیئے

بھارتی دہشتگردی کے ثبوت پاکستان نے سلامتی کونسل کے مستقل رکن ملکوں کے سفیروں کو دیدیئے
کیپشن:   فائل فوٹو

اسلام آباد: ترجمان دفتر خارجہ نے بتایا کہ سلامتی کونسل کے مستقل رکن ملکوں کے سفیروں کو دفتر خارجہ میں بھارتی دہشتگردی کے حوالے سے بریفنگ دی گئی ہے ۔ سفیروں کو پاکستان کے خلاف بھارتی دہشتگردی کے ثبوتوں پر مبنی ڈوزئیر بھی پیش کیا گیا ۔ ڈوزیئر کے ذریعہ پاکستان کیخلاف دہشت گردی کی سرگرمیوں کو فروغ دینے ، معاونت ، فروغ ، مالی اعانت اور عمل درآمد کی فعال منصوبہ بندی کی دستاویزات فراہم کی گئیں ۔

بریفنگ میں بتایا گیا کہ 2001 کے بعد سے پاکستان کو اپنی سرزمین پر انیس ہزار سے زیادہ دہشت گردانہ حملوں اور تراسی ہزار ہلاکتوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ براہ راست معاشی نقصان 126 ارب امریکی ڈالر سے زیادہ رہا ہے۔ بھارت کی جانب سے دہشت گردوں کو سپانسر کرنے کے نتیجے میں پاکستان کو سرحد پار سے خطرات کا سامنا ہے۔ بھارت خود دہشت گردی کا ڈرامہ رچا کے اور پاکستان کے خلاف دہشت گردی سے متعلق الزامات عائد کر کے عالمی برادری کو گمراہ کرنے کی کوشش کر رہا ہے جبکہ پاکستان کو بدنام کرنے کے لئے بھارت نے مقبوضہ کشمیر اور بھارت کے اندر بھی جھوٹی کاروائیاں کیں۔ تاہم اب یہ ڈرامہ ختم ہو گیا ہے اور دنیا بھارت کا اصل چہرہ دیکھ سکتی ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں کئی دہائیوں تک جاری رہنے والی ریاستی دہشت گردی اور پاکستان میں ریاستی سرپرستی میں دہشت گردی اور عدم استحکام کی کوششوں کی وجہ سے بھارت دنیا بھر میں بُری طرح سے بے نقاب ہو گیا ہے ۔

دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کیخلاف دہشت گردی کو سپانسر کرنے کا بھارت کا سب سے جانا پہچانا اور ناقابل تردید چہرہ کمانڈر کلبھوشن یادیو ہے جسے مارچ 2016 میں رنگے ہاتھوں پکڑا گیا تھا۔ پاکستان میں بغاوت ، تخریب کاری اور دہشت گردی میں ان کی شمولیت بھارت کے خلاف متضاد ثبوتوں کا ایک حصہ ہے۔ دستاویزات میں کہا گیا ہے آر ایس ایس، بی جے پی کے طرف سے باھرت اور پاکستان کے مسلمانوں کے خلاف جدوجہد کی گئی اور دنیا کو "بھگوا دہشت" سے بھی آگاہ کیا گیا ہے۔ اجمیر درگاہ ، اور سمجھوتہ ایکسپریس کے دہشت گردی کے مقدمات ، جیسے سوامی اسیمانند کے ماسٹر مائنڈ کو ہندوستان کی قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) کے سامنے اعتراف کے بعد مکمل ریاستی تحفظ حاصل ہوا ہے اور پورے ہجوم کے سامنے بری کر دیا گیا ہے۔

دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ جیسا کہ حالیہ اقوام متحدہ کی رپورٹوں میں روشنی ڈالی گئی ہے اس طرح بھارت میں داعش اور اے کیو ایس کی موجودگی اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ بھارت اقوام متحدہ کی جانب سے نامزد بین الاقوامی امن خراب کرنے والی تنظیموں کا گڑھ بن کر ابھرا ہے اور جو اس خطے کے لئے ایک بہت بڑا خطرہ ہے۔ دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ عالمی برادری کی اجتماعی ذمہ داری ہے کہ وہ بھارت کا محاسبہ کرے اور دہشت گردوں کی تنظیموں کی سرپرستی میں ملوث بھارتی شہریوں کے خلاف کارروائی کے لئے عملی اقدامات کرے۔ ہم اقوام متحدہ سے امید کرتے ہیں کہ پاکستان کے فراہم کردہ ٹھوس شواہد کی بنیاد وہ بھارت کے خلاف ایکشن لیں۔