شہباز شریف فیملی کیخلاف مشتاق چینی کے حیرت انگیز انکشافات

شہباز شریف فیملی کیخلاف مشتاق چینی کے حیرت انگیز انکشافات
معاہدوں کے مطابق سلمان شہباز کو 61 کروڑ قرض دیا گیا، مشتاق چینی۔۔۔۔۔۔۔۔فائل فوٹو

لاہور: مشتاق چینی کے شہباز شریف فیملی کے خلاف حیرت انگیز انکشافات سامنے آ گئے۔ وعدہ معاف گواہ مشتاق چینی کا بیان ریکارڈ کر لیا گیا۔انہوں نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ کروڑوں روپے قرض کے فرضی معاہدے کیے گئے۔ حمزہ اور سلمان شہباز کے ساتھ 2005 سے کاروبار کر رہا ہوں اور سلمان شہباز نے ٹرانزیکشنز کو قانونی بنانے کیلئے 2 فرضی معاہدے کیے۔ ایک معاہدہ میرے، دوسرا میرے بیٹے کے ساتھ کیا گیا اور معاہدوں کے مطابق سلمان شہباز کو 61 کروڑ قرض دیا گیا۔


وعدہ معاف گواہ مشتاق چینی نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ جو رقم سلمان شہباز کو ٹرانسفر کی وہ انہی کی تھی۔ دونوں معاہدے فرضی تھے، حقیقت سے کوئی تعلق نہیں تھا اور سلمان شہباز نے 10 کروڑ ہماری کمپنی کے اکاؤنٹ میں ٹرانسفر کیے۔ ہم پیسہ وائٹ ہو جانے کی لالچ میں کام کرتے رہے اور مجھے اپنے گناہ کا احساس ہے۔ قانون کی مدد کیلئے تمام حقائق پر مبنی بیان دیا، جرم سرزد ہوا، معافی دی جائے۔

مشتاق چینی نے بیان میں کہا میں نے بینک الفلاح سمیت متعدد بینکوں میں اکاؤنٹ کھلوائے اور بینک الفلاح کے منیجر عبدالقیوم کے ساتھ اسی وجہ سے تعلق بن گیا۔ عبدالقیوم کا بیٹا قاسم قیوم بھی منی چینجر کا کام کرتا تھا اور اس سے بھی تعلق بن گیا۔ 2014 میں شہباز شریف فیملی کے سی ایف او محمد عثمان نے سلمان شہباز کیلئے 60 کروڑ کی رقم کرنے کا کہا۔ میں نے کہا اتنی بڑی رقم دے نہیں سکتا اور جیسے جیسے رقم میرے اکاؤنٹ میں آتی رہی جبکہ سلمان شہباز کے چیک کاٹ کر دیتا رہا۔

وعدہ معاف گواہ مشتاق چینی نے مزید کہا مشتاق اینڈ کمپنی کے اکاؤنٹ میں بھی 2 کروڑ 93 لاکھ کی بیرون ملک سے ٹی ٹی لگوائی گئی۔ میرے اکاؤنٹ میں یہ رقم سلمان شہباز کے سی ایف او نے بھجوائی اور جس سے کوئی تعلق نہیں۔ سلمان شہباز کے ملازم سید طاہر نقوی کے نام پر کمپنی بنائی گئی۔ کمپنی سے 10 کروڑ بذریعہ چیک پہلے میری کمپنی میں منتقل کیے گئے اور 10 کروڑ کے چیک سلمان شہباز نے کاٹ کر عثمان کے حوالے کر دیئے۔ میری کمپنی کے اکاؤنٹ میں ٹی ٹی کے ذریعے 50 کروڑ روپے سلمان شہباز کے ملازم طاہر نقوی کےکمپنی سے ٹرانسفر ہوئے۔