شام میں کیمیائی حملوں کی تحقیقات، روس نے دوبارہ قرارداد کو ویٹو کر دیا

نیو یارک: اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں شام میں کیمیائی حملوں کی تحقیقات سے متعلق قرارداد کو روس نے ایک بار پھر ویٹو کر دیا۔ برطانوی میڈیا کے مطابق سلامتی کونسل میں شام میں کیمیائی حملوں کی انکوائری کی مدت میں توسیع کی قرارداد روس نے ویٹو کر دی۔ 11 ممالک نے قرراداد کی حمایت کی جب کہ روس اور بولیویا نے مخالفت میں ووٹ دیا۔

نیز چین اور مصر نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔ امریکی مندوب نکی ہیلی نے کہا کہ شامی حکومت کی جانب سے نہتے شہریوں کے خلاف کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال قبول نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت پڑی تو قرارداد دوبارہ پیش کریں گے۔

ا قوام متحدہ میں روسی سفیر ویسلے نیبینزیا نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جانب سے کی گئی تحقیقات جانبدار ہیں جس کی کسی صورت حمایت نہیں کی جا سکتی۔ روس نے اپنے حلیف بشار الاسد کی حمایت میں سلامتی کونسل میں یہ 10 ویں قرارداد ویٹو کی ہے۔

یاد رہے کہ رواں سال 4 اپریل کو شام کے شہر خان شیخون میں سیرین گیس حملے میں 80 سے زائد عام شہری جاں بحق ہو گئے تھے۔ اقوام متحدہ کی انکوائری میں شامی حکومت کو کیمیائی حملے کا ذمے دار قرار دیا گیا تھا۔

نیو نیوز کی براہ راست نشریات، پروگرامز اور تازہ ترین اپ ڈیٹس کیلئے ہماری ایپ ڈاؤن لوڈ کریں